آپ بیتی … شاہی قلعہ سے جلو پارک تک

ایڈیٹر  |  ڈاک ایڈیٹر
آپ بیتی … شاہی قلعہ سے جلو پارک تک

آپ بیتی … شاہی قلعہ سے جلو پارک تک
آپ بیتیاں آپ نے بہت پڑھی ہوں گی، لیکن جاوید احمد بٹ کی زیر تبصرہ کتاب شاہی قلعہ سے جلو پارک تک ان سب سے بہت منفرد، نہایت دلچسپ، فکر انگیز اور دِل دہلا دینے والی آپ بیتی ہے۔ جماعت اسلامی کے کارکن جاوید احمد بٹ تحریک نظام مصطفی کے دوران پکڑے گئے تھے۔ بھٹو حکومت نے قومی اتحاد کی مختلف جماعتوں کے سرگرم کارکنوں کی پکڑ دھکڑ کے دوران ان پر بدترین تشدد کا وطیرہ اختیار کیا۔ حضرت علیؓ کا قول ہے کہ جو بات دل سے نکلتی ہے وہ سننے والے کے قلب میں اتر جاتی ہے۔ جاوید احمد بٹ کی تحریر سے بھی یہی تاثر عیاں ہوتا ہے جب وہ تحریک نظام مصطفی کا ذکر کرتے ہوئے ان واقعات کو دہراتے ہیں جو انہیں شاہی قلعہ کی کوٹھڑیوں سی آئی اے چونامنڈی کے عقوبت خانوں اور کرائمز برانچ انارکلی اور قربان لائن کے ٹارچر سیلوں میں پیش آئے۔شاہی قلعہ سے جلو پارک تک ایک سیاسی ورکر کی آپ بیتی اور اسیری کے دوران اسکے ذاتی کرب و اذیت کی مختلف کیفیات کی روداد ہی نہیں، ہماری ماضی قریب کی قومی اور سیاسی تاریخ کی اہم تابناک داستان بھی ہے جو وطن اور قوم کا درد رکھنے والے محب وطن افراد کیلئے یادوں اور فکر کے کئی دریچے وا کرتی ہے۔ کتاب ڈان بکس 68 مزنگ لاہور نے چھاپی ہے۔ فکشن ہاؤس لاہور، کراچی، حیدرآباد سے دستیاب ہے۔