تعلیمی پالیسیوں سے عوام نالاں

مکرمی! حکومت تعلیم پر پوری توجہ دینے کا دعویٰ کرتی ہے لیکن عملاً حکومتی پالیسیوں سے عوام نالاں ہیں۔ حکومت کی ہدایت پر پنجاب بھر کے تمام تعلیمی بورڈ نے پالیسی وضع کی ہے کہ 31 اگست 2001ءکے بعد میں پیدا ہونے والے بچوں کی جماعت نہم کےلئے رجسٹریشن نہیں ہو سکے گی کیونکہ ان کی عمر بارہ سال سے کم ہے لہٰذا رجسٹریشن منسوخ کی جاتی ہے اس طرح پنجاب بھر میں ہزاروں کی تعداد میں طلباءو طالبات کو شدید پریشانی اٹھانا پڑ رہی ہے اور ان کا قیمتی سال بھی ضائع ہونے کا خدشہ ہے۔ حکومت کو چاہیے کہ خصوصی دلچسپی لیتے ہوئے پالیسی میں تبدیلی لائے اور طلباءو طالبات کا مستقبل تاریک ہونے سے بچائے۔ یہاں یہ امر قابل ذکر ہے کہ یہ پالیسی ان بچوں کے لئے بنائی گئی ہے جو امسال نویں میں داخل ہوئے ہیں اور انہوں نے جماعت نہم کا سالانہ امتحان مارچ 2014ءکو دینا ہے۔(قمر گولاٹی نارنگ منڈی)