بلیک بیری موبائل سیٹ

مکرمی! روزنامہ نوائے وقت، ۳۱ مئی ۹۰۰۲ کی ایک خبر کے مطابق ’پنجاب بیوروکریسی کے لیے ۲ کروڑ روپے کی مالیت کے ۰۰۶ بلیک بیری موبائیل سیٹ خریدنے کا فیصلہ کیا گیا ہے اور اس سے قبل پنجاب میں چیف سیکرٹری، سیکرٹری اور اعلی افسروں کو بلیک بیری موبائیل سیٹ خرید کر دیے جا چکے ہیں، اندازاً ماہانہ بل ۵۳ لاکھ روپے ہوگا۔ اخراجات سے قطع نظر اور اِن بلیک بیری موبائیل سیٹ کی افادیت یعنی ای میل اور انٹرنیٹ کے حوالہ سے عرض ہے کہ بلیک بیری موبائیل سیٹ کا بیوروکریسی میں رواج، سیکورٹی کے پیشِ نظر انتہائی خطرناک ہے کیونکہ بھارت اور فرانس سمیت کئی ممالک کے داخلی اور دفاعی امور کے محکمے اس ضمن میں اپنے خدشات کا اظہار کرچکے ہیں کہ بلیک بیری موبائیل سیٹ پر کی گئی گفتگو، ای میل اور بلیک بیری کی دوسری اپلیکیشنز کے ذریعے پیغام رسانی امریکہ، برطانیہ اور کینیڈا میں جاسوس اداروں کی دست برد سے محفوظ نہیں، درج ذیل مندرجات جو کہ انٹرنیٹ پر چند لمحوں کی ریسرچ کے نتیجے میں سامنے آئے قارئین کی خدمت میں پیش ہیں۔
۱۔ حکومتِ فرانس اپنے حکام میں بلیک بیری موبائیل سیٹ کے استعمال پر اس خدشہ کے پیشِ نظر کہ امریکہ اور برطانیہ اس کی مدد سے حکومتِ فرانس کی جاسوسی کر سکتے ہیں، پابندی لگا چکی ہے ۔ بلیک بیری موبائل سیٹ کے استعمال کے بارے میں فرانسیسی جنرل سیکرٹریٹ برائے نیشنل ڈیفنس کی پریشانی بجا ہے کہ بلیک بیری موبائل سیٹ کی ای میل امریکہ، برطانیہ اور کینیڈا میں لگے سرورز سے گزر کر اپنی منزل مقصود (خواہ وہ دو بلاک دور کا آفس ہی ہو) تک پہنچتی ہے۔ اس لئے امریکی ایجنسی این ایس اے کے ایجنٹ اِسے انٹرسیپٹ کر سکتے ہیں۔ فرانسیسی اکانومک انٹیلیجنس کے ہیڈ ایلن جولییٹ کا کہنا ہے کہ انٹرسیپشن کا ڈراکنومک وار فیئر کے دور میں ایک حقیقت بن چکا ہے اور امریکی بینکر اور بزنس مین میٹنگز کے دوران اپنے اپنے بلیک بیری موبائل سے بیٹری نکال کر سیٹ ٹیبل پر رکھ دیتے ہیں تاکہ فائول پلے کا امکان نہ رہے۔
۲۔ ہندوستانی وزارتِ داخلہ انہی سیکورٹی کے خدشات کو بنیاد بنا کر بلیک بیری کے نئے لائسنس دینے سے انکار کرچکی ہے۔
یہ بات ملحوظ خاطر رہے کہ ان ایجنسیز کے پاس ایسے سافٹ ویئر موجود ہیں جو کسی بھی زبان میں کی گئی گفتگو خصوصاً فارسی‘ پشتو‘ اردو‘ پنجابی‘ سندھی کو انگریزی میں ترجمہ کر سکتے ہیں۔ پنجاب حکومت جو کہ ان دنوں انتہائی بیدار مغز‘ باعمل اور قابلِ تقلید وزیر اعلیٰ کی سربراہی میں کام کر رہی ہے کا اعلیٰ حکام جن میں سیکورٹی حکام بھی بظاہر شامل ہونگے کو بلیک بیری موبائل سیٹ خرید کر دینے کا فیصلہ ان حقائق کی روشنی میں دانشمندانہ نہیں‘ اس پر فوراً نظرثانی کی جائے موجودہ حالات کو مدنظر رکھتے ہوئے اینٹی سائبر ٹیررازم ایڈوائزری کونسل تشکیل دینا چاہئے۔ (نعمان احمد شاہ… لاہور 0333-4222094)