غریب عوام اور مہنگائی

ایڈیٹر  |  ڈاک ایڈیٹر
غریب عوام اور مہنگائی

مکرمی! آج غریب‘ مفلس اور نادار کی زندگی مصائب و آلام میں گھری ہوئی ہے جس کی وجہ سے وہ ذہنی پریشانیو ں اور طرح طرح کی بیماریوں میں مبتلا کسپمرسی کی زندگی گزار رہا۔ کوئی اس کا پرسان حال نہیں جبکہ سفید پوش اور تعلیم یافتہ طبقہ کو بھی ناکافی سہولیات میسر ہیں۔ ان کو سخت محنت اور مزدوری کے باوجود بڑی مشکل سے دو وقت کی روٹی میسر ہوتی ہے۔ ان میں ادویات‘ پھل اور دیگر اشیاء ضروریہ خریدنے کی سکت کہاں موجود ہے۔ مہنگائی نے ان کو نیم مردہ کر رکھا ہے جبکہ امراء اپنی دولت کے بل بوتے پر عیش و عشرت کی زندگی گزار رہے ہیں۔ وہ بڑی ملوں کا مالک‘ کارخانہ دار‘ ٹرانسپورٹر‘ امپورٹ ایکسپورٹ کا لائسنس ہولڈر‘ ضروریات زندگی پر قابض بڑا ذخیرہ اندوز تھے۔ جب چاہتے مصنوعی قلت پیدا کرکے اشیاء خوردونوش ملک میں فروخت کرکے اپنی تجوریاں بھر رہا ہے۔ جب کبھی حکومت غریب اور بے آسرا لوگوں کیلئے فنانسنگ سکیم یا مراعات متعارف کرواتی ہے وہ اپنے روپے پیسے کے بل بولے پر سب سے پہلے استفسادہ کرتا ہے جبکہ غریب حسب سابق غربت کی چکی میں پستا رہتا ہے۔ صاحبان اقتدار سے اصلاح احوال کی درخواست ہے۔ (رب نواز صدیقی۔ غلہ منڈی پاکپتن شریف)