اور اِہلِ اقتدار زاروقطار رو پڑے

ایڈیٹر  |  مراسلات

 مکرمی! آج نوائے وقت میں ٹیلگراف کی خبر پڑھی کہ پیاز کی قیمت 100 روپے سن کر کانگریس کی آنکھوں میں آنسو آ گئے تو جناب ہمارے ملک میں مہنگائی کا عالم ہو شربا ہے بجلی اتنی مہنگی ہے کہ لوگ اپنے گھر کی قیمتی چیزیں بیچ کر بل ادا کر رہے ہیں پھل تو غریب آدمی کھانا بھول گیا ہے اور سبزیاں دالیں اتنی مہنگی ہیں کہ لوگ انہیں خر یدنے کی بجائے زہر خرید کر اپنے بچوں کا جہالت کے زمانے کی طرح قتلِ عام کر رہے ہیں تب وجہ جہا لت تھی اور اب و جہ غربت ہے اگر وہ ہندو ہو کر عوام کا دکھ محسوس کر سکتے ہیں تو ہمارے مسلمان اہلِ اقتدار کو تو دھاڑیں مار مار کر رونا چاہیے کہ ملک میں دہشت گردی بد عنوانی کرپشن مہنگائی جیسی صورتحال میں عوام رو رہی ہے جبکہ اہلِ اقتدار سوائے ٹاک شوز میں ایک دوسرے پر کیچڑ اُچھالنے کے کوئی خاص کارنامہ سر انجام نہیں دے رہے اب کم زکم ہر چیز میں انڈیا کی نقالی کرتے ہیں اب بھی ان کی نقالی کر کے ہی سہی عوام کی داد رسی کیجئے۔(ریحانہ سعیدہ برنی روڈ گڑھی شاہو لاہور)