نعت .... ندیم اختر ندیم

ایڈیٹر  |  مراسلات

در نبی پہ اگر پھر سے حاضری ہووے
دل و نگاہ میں کس درجہ روشنی ہووے
لبوں پہ ورد نبی ہو‘ نظر سوئے طیبہ
تو دوم دوم میں کیوں نہ نبی نبی ہووے
رسول پاک نے جو ہاتھ سے اٹھائی تھی
اسی دیوار کے سائے میں زندگی ہووے
وہی ہیں جادہ منزل وہی چراغ وفا
انہی کے ہاتھ جہاں بھر کی رہبری ہووے
بڑے ہی ذوق سے جبکہ ہووے گدائے رسول
ہمارے لہجے میں کیسے نہ عاجزی ہووے
ہوائیں جھومتی آتی ہیں شہر طیبہ سے
اسی لئے تو فضا¶ں میں تازگی ہووے
یہ ہم پہ ان کا کرم دیکھئے ندیم اختر
ہماری ذات کا اندر علیؓ علیؓ ہووے