زلزلہ

ایڈیٹر  |  مراسلات

مکرمی ! نذیر اکبر آبادی اپنی نظم بنجارہ نامہ میں کہتے ہیں ”سب ٹھاٹ پڑا رہ جائے گا جب لاد چلے گا بنجارہ“ جس کا مطلب ہے کہ انسان جتنی مرضی دنیا کی دولت اکٹھی کر لے لیکن موت اسے ہر صورت آنی ہے۔ کبھی حادثے کی صورت تو کبھی طبعی فطرتی ناگہانی آفت کی صورت میں اور کبھی زلزلوں کی صورت میں،جس طرح گذشتہ دنوں میں زلزے کی شدت 7.8 ریکٹر سکیل پر نوٹ کی گئی۔ اگر دنیاوی دولت موت کو ٹال نہیں سکتی تو پھرکیا فائدہ اسے جمع کرنے کا۔ ان مادی لوازمات کا فا ئدہ اٹھانے کیلئے انسان کا زندہ رہنا ضروری ہے لہذا ہمیں آخرت کی دولت کو جمع کرنے کی فکر کرنی چاہیے۔ اللہ تعالی ہم سب پر اپنی رحمت کرے اور اپنے حفظ وامان میں رکھے۔آمین!(محمد طیب زاہر رانالاہور)