لاہور پھر لہو لہو ہو گیا

ایڈیٹر  |  ڈاک ایڈیٹر
لاہور پھر لہو لہو ہو گیا

مکرمی! 13فروری کی شام اہل لاہور پر قیامت بن کر ٹوٹی جب ایک خود کش بمبار نے پنجاب اسمبلی کے سامنے پنجاب ڈرگ ایکٹ کیخلاف احتجاج کرنیوالے دوا ساز کمپنیوں کے مالکان و کارکنوں اور انکے ساتھ مذاکرات کرنیوالے اعلیٰ پولیس افسران کے درمیان خود کو اڑا لیا۔ یہ امر باعث حیرت ہے کہ اس سانحہ سے صرف 6روز قبل یعنی7فروری کو انسداد دہشتگردی کے ادارے نیکٹا نے پنجاب حکومت کو اہم عمارتوں، سکولوں، کالجوں، یونیورسٹیوں اور حساس مقامات کو نشانہ بنانے کے خطرہ سے آگاہ کیا تھا مگر اس پیشگی اطلاع کے باوجود پنجاب اسمبلی کے سامنے احتجاج اور دھرنا دینے والے شرکاء کو نہ روکا گیا اور نہ گرفتار کیا گیا۔دہشتگردی کیخلاف جنگ ہم نے ہر صورت جیتنی ہے۔ قومی سلامتی کے اداروں بشمول پولیس ، رینجرز، فوج ایف سی اور دیگر انٹیلی جنس اداروں کو مزید فعال اور متحرک بنایا جائے اور نیشنل ایکشن پلان کے 20نکاتی ایجنڈے پر بھی فوری طور پر عملدرآمد کروایا جائے موجودہ صورتحال ایسے ہی اقدامات کی متقاضی ہے۔(کامران نعیم صدیقی - لاہور)