اسم بامسمہ بن کر دکھائیں

ایڈیٹر  |  مراسلات

مکرمی!دانشور سوال کرتے ہیں کہ نام میں کیا رکھا ہے‘ اہل علم جواب دیتے ہیں کہ نام میں بہت کچھ رکھا ہے جو انسان اپنے نام پر پورا نہ اترتا ہو اسے نام بدل لینا چاہئے۔ دینی سکالر کہتے ہیں کہ نام نہیں بدلنا چاہئے بلکہ نام کے معنی بامسمہ ہونے کی کوشش و جدوجہد جاری رکھنی چاہئے۔ عارف نامی کسی دوست سے جب یار بیلیوں نے پوچھا کہ تہاڈے ناں دے معنے کیہہ نیں؟ جواب ملا ولی اللہ لیکن میں کہاں ولی اللہ! دینی نقطہ نظر سے ایسے انسان کو اسم بامسمہ بن کر دکھانا چاہئے اور اگر زندگی وفا نہ کرے تو بال بچوں پر لازم آتا ہے کہ اپنے والد کی مساعی کو جاری و ساری رکھیں اور جہد مسلسل پر حرف نہ آنے دیں۔(پروفیسر ایم یوسف قریشی743 ڈی جوہر ٹاﺅن لاہور)