آخر کیوں....؟؟

مکرمی! میں آپ کے موقر جریدے کی وساطت سے عوام کے علمبرداروں کو ان کے الیکشن سے پہلے کئے ہوئے کچھ وعدے یاد دلانا چاہتی ہوں۔ روٹی، کپڑا، مکان اور تعلیم ہر شہری کا بنیادی حق ہے جو کہ اس سے کوئی نہیں چھین سکتا لیکن آپ نے تو لگتا ہے کہ غریب کے منہ سے روٹی کا نوالہ تک چھیننے کا فیصلہ کر لیا ہے۔ اب تو روٹی کی قیمت بھی آسمان سے باتیں کرنے لگی ہے۔ دال کے تو کیا ہی کہنے!!! ہر چیز کی قیمت دن دوگنی اور رات چوگنی ترقی کر رہی ہے۔ اگر ہمارے ملک کے حالات اتنے ہی خراب ہیں تو ان حالات کا اثر ہمیں آپ کی زندگیوں میں کیوں نظر نہیں آتا؟ کیوں غریب عوام ہی اس مہنگائی کی چکی میں پستی ہے۔ آپ کے لباسوں پر کیوں ملک کے حالات اثرانداز نہیں ہوتے؟؟ آپ کے گھروں کی سہولیات میں کیوں کمی نہیں ہوتی؟ کیوں آپ کے گھروں کو لوڈشیڈنگ کا عذاب نہیں جھیلنا پڑتا؟ کیوں آپ کی بیگمات کی شاپنگ میں کمی نہیں آئی؟ کیا ملک کے حالات صرف ہمارے لئے ہی خراب ہیں؟؟ آخر کیوں؟ (سعدیہ فضل حسین فرید ٹاو¿ن ساہیوال)