لوڈشیڈنگ کے ساتھ کالی بھیڑوں کا خاتمہ بھی ضروری ہے

سیالکوٹ ایک صنعتی شہر ہے جہاں سے ملک کو سالانہ ایک کھرب روپے سے زائد کا زرمبادلہ حاصل ہوتا ہے لیکن بجلی کی غیر اعلانیہ بیس گھنٹے کی روزانہ لوڈشیڈنگ نے صنعتی سرگرمیاں ٹھپ کرکے رکھ دی ہے۔نئے وفاقی وزیر پانی وبجلی خواجہ محمد آصف کا تعلق سیالکوٹ سے ہے اور بزنس کمیونٹی نے حالیہ انتخابات میں مسلم لیگ (ن) کے امیدواروں کی کامیابی میں اہم کردار اداکیا ہے اب دیکھنا یہ ہے کہ مسلم لیگ (ن) کی حکومت سیالکوٹ میں بجلی کی بدترین لوڈشیڈنگ کے خاتمہ کیلئے کیا اقدامات کرتی ہے۔ گیپکو کے محکمہ کے کئی سالوں سے تعینات افسران کی ملی بھگت سے بجلی چوری کی شکایات عام ہیں اورخصوصا شہریوں کے ساتھ نارواسلوک بھی معمول ہے۔ مسلم لیگ (ن) کی حکومت کو بجلی کی لوڈشیڈنگ کے خاتمہ کے ساتھ ساتھ محکمہ میں موجود کالی بھیڑوں کے خلاف بھی کاروائی عمل میں لانا ہوگی وگرنہ جس طرح بجلی کا بحران پیپلزپارٹی کو لے ڈوبا اس جیسی صورتحال کا سامنا مسلم لیگ (ن) کو بھی کرنا پڑے گا۔(میاں نعیم اقبال:نیامیانہ پورہ سیالکوٹ)