اسٹیٹ بینک کو قومی خزانہ بنائیں

مکرمی! قومی خزانہ (سٹیٹ بینک) بینکوں کو زیادہ سے زیادہ(اربوں روپیہ) سود کمانے کا موقع دینے کے لئے استعمال ہو رہا ہے جبکہ حکومت اور قوم ”قلت زر“ کا شکار ہو کر کوئی حقیقی ترقیاتی کام نہیں کر سکتی جس سے پورا ملک معاشی پستی کے دلدل میں غرق ہوتا جا رہا ہے۔ اگر اسٹیٹ بینک کو قومی خزانہ بنا دیا جائے، اسے ہمیشہ بھرا رکھاجائے اور حکومت کو اس خزانے کو خرچ کرنے کا مکمل اختیار حاصل ہو تو اس کے مندرجہ ذیل فوائد حاصل ہوں گے: -1 بجٹ بنانے اور ٹیکس لگانے سے نجات ملے گی۔ -2پیداوار اور اس کے نتیجے میں برآمدات بے انتہا بڑھائی جا سکیں گی جس سے بیرونی قرصوں سے نجات حاصل ہو گی۔ -3توانائی بڑھانے کے تمام ذرائع پاکستان میں موجود ہیں۔ ان ذرائع سے بے حد و حساب توانائی پیدا کرکے پیداوار اور بیرونی کرنسیوں کی آمدنی کا ”سونامی“ لایا جا سکتا ہے۔-4پورے ملک میں مفت تعلیم اور مفت علاج کا بندوبست کیا جا سکتا ہے۔-5ملازمین کی تمام ضرورتییں پوری کرکے عدلیہ اور انتظامیہ سے کرپشن کا خاتمہ کیا جا سکتا ہے۔-6عوام کا معیار زندگی امریکہ کی سطح پر لایا جا سکتا ہے۔ سودی نظام ختم کرنے کے بعد ہی پاکستان اپنی منزل کو پا سکے گا جو تمام آثار سے معلوم ہوتا ہے کہ مسلمانوں کی عظمت رفتہ کی بحالی کے لئے عالم اسلام کی قیادت کرنا ہے۔ انشاءاللہ
(ظفر عمر خاں فانی۔Tel:021-34572817)