سرحدی دیہات کی زبوں حالی

ایڈیٹر  |  ڈاک ایڈیٹر
سرحدی دیہات کی زبوں حالی

مکرمی! جناب وزیراعلیٰ صاحب! ان سینکڑوں دیہات میں بسنے والے لاکھوں افراد تعلیم، صحت، ذرائع آمدروفت بھی تمام سہولتوں سے مسلسل محروم چلے آرہے ہیں آج تک کوئی حکمران ایسا نہیں آیا جس نے ان دیہات اور باسیوں کے معیار زندگی کو بہتر بنانے کی طرف توجہ دی ہو۔ ان وسائل سے انکی راتوں کی نیندیں حرام ہیں۔ صحت کی سہولتیں نہ ہونے کے برابر ہیں آج کے ترقی یافتہ دور میں بھی ان لوگوں کو ایمرجنسی کی صورت میں 25 سے تیس کلو میٹر فاصلے کر کے قریبی ہسپتال میں لے جانا پڑتا ہے۔ خراب گاڑیاں اور ٹوٹی پھوٹی سڑکیں مریض کی حالات کو مزید بگاڑ دیتی اور اکثر راستے میں زیادہ وقت لگنے اور ٹوٹی پھوٹی سڑکوں پر خوار ہو نے کے بعد مریض اپنی جان سے ہاتھ دھو بیٹھتا۔ اپنے ان سنجیدہ مسائل کے حل کیلئے وہ کسی مسیحا کی تلاش میں ہیں ۔(عنایت اللہ انصاری لاہور)