اے۔ پی۔ سی کی احتجاجی تحریک

ایڈیٹر  |  ڈاک ایڈیٹر
اے۔ پی۔ سی کی احتجاجی تحریک

مکرمی! گزشتہ روز سی۔ آئی۔ اے کے سربراہ مائیک پومپیو خصوصی طیارے سے دِلی پہنچے اور ’’را‘‘ کے چیف کو ساتھ لیکر کابل پہنچ گئے۔ یہ بات غور طلب ہے کہ دونوں انٹیلی جنس کے سربراہوں کا اکٹھا ہو کر افغانستان جانا کیا پاکستان کے خلاف کوئی سازش تو نہیں۔ ناصر جنجوعہ صاحب پہلے ہی کہہ چکے ہیں کہ امریکہ اور انڈیا مل کر پاکستان میں دہشت گردی کروا رہے ہیں۔ اس کے علاوہ میجر جنرل آصف غفور کا بیان بھی باعث تشویش ہے کہ امریکہ مہم جوئی پر اترا ہوا ہے۔ بھارت سے سرجیکل سڑائیک کروانے اور سی پیک منصوبوں پر ڈرون حملے کروانے کا پروگرام بنا رہا ہے۔ اے۔ پی۔ سی کی احتجاجی تحریک کے سرکردہ رہنما قوم پر یہ واضح کریں کہ جب موجودہ حالات اتنے گھمبیر ہیں تو کیا اس میں اس تحریک کو شروع کرنا قومی مفاد میں ہے۔ یقیناً جواب نہیں میں ہوگا۔ اگر آپ اس تحریک کو ختم نہیں کرتے تو ساری قوم یہ سمجھنے پر مجبور ہوگی کہ آپ ملک عزیز کے خیرخواہ نہیں ہیں اور آپ کو اپنا سیاسی مفاد مقدم ہے۔ خدا کا خوف کریں اور انتشار پھیلانے کی کوشش مت کریں کیونکہ اس طرح دشمن کی چالوں کو سہارا ملے گا۔ (منظر شفیع سینئر ایڈووکیٹ گلشن راوی لاہور)