عبادت گاہوں پر حملے

ایڈیٹر  |  ڈاک ایڈیٹر
عبادت گاہوں پر حملے

مکرمی !اللہ نے فرشتوں پر جنوں پر انسانوں کو اہمیت دی اور اسے اشرف المخلوقات قرار دیا اس کا درجہ بلند کیا اور اس کی تخلیق کا مقصد محض اپنی عبادت نہیں رکھا بلکہ فلاح انسانی کو اس کا مقصد قرار دیا اسے انسانیت کی تعلیم دی ایک انسان کے قتل کو انسانیت کا قتل قرار دیا لیکن آ ج مذہب کے نام پر لڑی جانے والی جنگوں اور دہشت گردی نے یہ بات ثابت کر دی ہے کہ آج کا انسان اپنی انسانیت کو فراموش کر کے حیوانیت کے دور میں داخل ہو گیا ہے اور اپنی مطلب براری کے لئے خود کی جان بھی خطرے میں ڈال سکتا ہے اور دوسروںکی بھی اور اس کے لئے اسے کسی مذہب کے ٹیگ کی بھی ضرورت نہیں کیو نکہ دنیا کا کوئی مذہب برائی اور گناہ کی ترغیب نہیں دیتا تو پھر عبادت گاہوں پر حملے نہ تو مسلمان کر سکتے اور نہ زند جلانے کا کام صحیح مسیحی ذہن رکھنے والے عیسائی کر سکتے ہیں یہ شر پسند دہشت گرد پاکستان اور پاکستانیوں کو بد نام کرنا چاہتے ہیں اور اس کے ساتھ ساتھ یہ مسلم امہ اور عیسائیوں کو آپس میں لڑانا چاہتے ہیں۔ (ریحانہ سعیدہ ، گڑھی شاہو لاہور)