پولیس ناکے

ایڈیٹر  |  ڈاک ایڈیٹر
پولیس ناکے

مکرمی: آپ کے مؤقر جریدے کی وساطت سے میں خادمِ اعلیٰ پنجاب اور آئی جی پنجاب کی توجہ ایک اہم مسئلے کی طرف مبذول کروانا چاہتا ہوں۔ آجکل پولیس ناکوں کا رجحان کافی بڑھ گیا ہے بہت سی جگہوں پر ناکے لگائے جاتے ہیں۔ بظاہر جن کا مقصد شہریوں کو تحفظ دینا اور عوام کے جان و مال کی حفاظت ہے۔ مگر اسکے برعکس درحقیقت ان ناکوں کا مقصد عوام کی جیبوں پر ڈاکے ڈالنا ہے۔ ان ناکوں پر زیادہ تر موٹرسائیکل سواروں کو روک کر کاغذات چیک کئے جاتے ہیں جن کے پاس کاغذات نہ ہوں وہ پیسے دے کر اپنی جان چھڑوا لیتے ہیں اور جو پیسوں کی پیشکش نہ کرے اُس کی گاڑی بند کر د ی جاتی ہے اور جس کے پاس مکمل کاغذات ہوں پھر اس کی اس طریقے سے تلاشی لی جاتی ہے گویا ایسا معلوم ہوتا ہے کہ پورے کاغذات ہونا بھی ایک جرم ہے۔ حتیٰ کہ بٹوے تک چیک کئے جاتے ہیں عوام سے پیسے بٹورنے کے لئے کوئی نہ کوئی جواز تلاش کرنے کی کوشش کی جاتی ہے۔ ناکوں پر تعینات پولیس جوانوں کی اخلاقی تربیت کی اشد ضرورت ہے۔  (علی عباس، لوہاری گیٹ لاہور/ 0321-4895186 )