وزیراعلیٰ اور آئی جی صاحب دادرسی کریں

ایڈیٹر  |  ڈاک ایڈیٹر
وزیراعلیٰ اور آئی جی صاحب دادرسی کریں

مکرمی! ہماری وراثتی زمین رقبہ 9کنال 3مرلہ خسرہ نمبر 298 کھتونی نمبر 9/28 ہے جس کا سول کورٹ نے 2بار ہمارے حق میں فیصلہ دیا ہے۔ مذکورہ بالا زمین پیراگون سٹی میں آئی ہوئی ہے۔ تھانہ برکی کاایس ایچ او نجانے کس کا آلہ کار بن کر مختلف حیلے بہانوں سے ہم پر جھوٹے مقدمات درج کرکے ہمیں زمین کے کاغذات پر انگوٹھے لگانے کی بات کرتا ہے۔ ایک رات تقریباً 3بجے تھانہ برکی سے پولیس گاڑی آئی، اصغرعلی اور چند نامعلوم افراد ہمارے گھر آئے اور ایک لفافہ نکال کر ٹیبل پر رکھ دیا اور کہا کہ یہ چرس اس گھر سے برآمد ہوئی ہے اور میری والدہ اور بھابی کو 4لاکھ 75ہزار رقم سمیت تھانہ لے گئے اور ان کے خلاف 9-C کا پرچہ کردیا۔ پھر 02-07-17 کو میرے بھائی کو پکڑ کر اسکے خلاف بھی پرچہ 9-C کاٹ دیا۔ میرے والد جب ان کے پیچھے گئے تو ان کو بھی تھانہ میں بٹھا لیا۔ دو دن حبس بے جا میں رکھ کر زمین کے کاغذات پر انگوٹھا لگانے پر مجبور کرتے رہے۔ جب وہ نہ مانے تو 04-07-17 کو میرے والد پر بھی 9-C کا پرچہ کردیا۔ جناب پولیس والے ہم پر مسلسل ظلم پر ظلم ڈھائے جارہے ہیں ہمارا قصور کیا ہے؟ آج تک ہماری شنوائی نہیں ہوسکی۔ہماری وزیراعلیٰ پنجاب اور آئی جی صاحب سے التجا ہے کہ ہمیں اس ظلم سے نجات دلائی جائے اور ذمہ داروں و ملوث پولیس اہلکاروں کے خلاف فوری کارروائی کی جائے۔

فدویہ نسرین بی بی دختر احمدعلی‘ ساکن گائوں( پھلروان)