آزاد مملکت؟؟؟

مکرمی! پاکستان کے قیام کو آج ایک طویل عرصہ گزر چکا ہے اور قیام پاکستان سے یہ بات متوقع تھی کہ ایک آزاد مملکت قائم ہو گی جہاں مسلمان ہر طرح کی غیر اسلامی سازشوں سے پاک رہ کر اسلامی تعلیمات کو ترویج دے سکیں گے تاکہ پاکستان کے نوجوان طلبا و طالبات جوکہ اس ملک کا سرمایہ ہیں ان کے اذہان اسلامی طریقہ زندگی سے منور ہوں گے اور یہ نور ان کو اس ملک کی درسگاہوں سے ملا ہو گا لیکن کیا یہ بات ہماری نظریاتی بنیادوں کے خلاف نہیں ہے کہ ہم آج آزاد ہونے کے باوجود بھی مغربی ممالک کے طریقہ تدریس کو اپنے اداروں میں مسلط کئے ہوئے ہیں۔ ہمارے ملک میں ذہانت کی کمی ہے یا وسائل کی؟؟؟ ہر طرف لالچ اور بے دینی کی فضا پھیل چکی ہے۔ ہمارے اسلامی نظریہ تعلیم کو دھندلا کر دیا گیا ہے۔ مغرب ہمیشہ کی طرح نہ کبھی ہمارے ساتھ مخلص تھا اور نہ کبھی ہو سکتا ہے۔ اللہ تعالیٰ نے ہمیں ایک آزاد مملکت جیسی نعمت عطا کی ہے۔ لیکن افسوس کہ ہماری اس مملکت کو قدردان نہیں ملے جو اس ملک کو اسلامی ڈگر پر چلاتے۔ جیساکہ قائداعظم کا خواب تھا کہ دن دگنی اور رات چوگنی ترقی ہمارے ملک کا معمول ہو گی.... کہیں یہ خواب ایک خواب ہی نہ رہ جائے!!!اللہ اس مملکت کو نیک‘ دیانتدار اور صالح رہنما عطا کرے جو اس مملکت کو اسلامی نہج پر چلا سکیں۔ماریہ فضل 29\\\\Q فرید ٹاون