وٹہ جرک۔ تھرو بائولنگ اور آف سپنر کا فقدان

ایڈیٹر  |  ڈاک ایڈیٹر
وٹہ جرک۔ تھرو بائولنگ اور آف سپنر کا فقدان

مکرمی! دنیائے کرکٹ میں آج تک بہت سے نامور آف سپنر جم لے کر جنہوں نے ایک ٹیسٹ میں 19 وکٹیں لے کر ورلڈ ریکارڈ کیا۔ مرلی دھرن جو بدترین وٹہ بائولر تھے۔ جان ایمبری ، ایڈی ہیمنگز، پیٹ پوکاک، بروس یارڈ لے لائنز بھارت آف سپنر کے معاملے بڑا زرخیز رہا۔ مورتی، ندکرنی، سلیم درانی، وینکڈر اگھون، ایرا پری پرسنا، ارشد ایوب، ہربجن سنگھ پاکستان کے حسیب احسن، اعجاز فقیہ سعید اجمل، محمد حفیظ ، آفتاب بلوچ وغیرہ وٹہ چکر جرک تھرو بائولنگ کرتے تھے۔ ان سے کے بڑے چکر بائولر سعید اجمل اور محمد حفیظ تھے۔ سعید اجمل جنہیں ڈومیسٹک کرکٹ میں کئی بار جرک بائولنگ کی پکار کا شکار ہوئے۔ مصبا الحق کی دوستی اور خوشبو سے کئی سال اپنی دوسرے سے وکٹیں لیتے رہے۔ محمد حفیظ جنہیں پروفیسر کہا جاتا ہے حالانکہ ان کا اصلی نام چندا اور یہ بھی مصباح کے دست راست اور قانونی مشیر تھے۔ بدترین سٹائل کے وٹہ بائولر ہوئے وہ اپنی احساس کمتری کے شکار ہونے کی وجہ سے کبھی انگلش کا سہارا لیتے ہیں اوپرسے بے پناہ ایماندار لیکن انتہائی چالاکی کا شکار کوہلی اور ٹنڈولکر کو بھی سمجھا دیں اگر ان کے سامنے والے بلے باز70 پر اور خود یہ 4 رنز پر کھیل رہے ہوں تو اس کو بھی سمجھاتے ہیں۔ بدترین فیلڈ بلے باز اور وٹہ بائولنگ پاکستان کرکٹ بورڈ ان کی وٹہ بائولنگ کو ٹھیک کرنے کے لئے کروڑوں روپے خرچ کر چکا ہے لیکن مصباح حفیظ اور اظہر علی ڈھیروں کھلاڑیوں کا مستقبل تباہ کر چکے ہیں۔ جن میں فواد عالم عمر امین، محمد اصغر خرم منظور سرفہرست ہیں۔

(طاہر شاہ سابق فرسٹ کلاس کرکٹر لاہور)