بیواﺅں ‘ یتیموں ‘ معذوروں اور بوڑھے پنشنرز کی فریاد

مکرمی! ہمارے پاس جو تھوڑا بہت اثاثہ یا جمع پونجی ہماری باقی ماندہ زندگی کا ایک سہارا ہے اور جس کو سیونگ سینٹرز یا ڈاکخانوں میں جمع کروا کر ماہانہ منافع حاصل کر کے اپنی اور اپنے اہل خانہ کی کفالت اور گھر کی گاڑی چلا رہے ہیں اس مہنگائی کی وجہ سے آئے دن تنخوائیں بڑھانے کے لئے پے کمشن تشکیل دئیے جا رہے ہیں۔ ٹرانسپورٹ کے کرایوں میں اضافے کئے جا رہے ہیں بجلی گیس‘ ٹیلیفون‘ پٹرول اور مٹی کے تیل کے نرخ بڑھائے جا رہے ہیں کھانے پینے اور ضروریات زندگی میں اضافے پر اضافے کئے جا رہے ہیں دوسری طرف ہماری جمع پونجی پر منافع کم سے کم تر کیا جا رہا ہے۔ صدر پاکستان اور حکومتی نمائندوں سے پرزور اپیل کی جاتی ہے کہ منافع کی شرح کو فوری طور پر بڑھایا جائے تاکہ ہم لوگ جو خاص کر زندگی کے آخری عشرے میں پہنچ چکے ہیں باقی ماندہ زندگی آرام اور سکون سے گزار سکیں۔(کرم علی لاہور)