حکومت کو مستحکم کریں

مکرمی! آپ کے اخبار ’’نوائے وقت‘‘ میں سعید آسی کا کالم ’’جو سنا افسانہ تھا‘‘ پڑھا۔ آج کل مختلف اخبارات میں فرینڈز آف پاکستان ’’ڈونرز کانفرنس‘‘ اور آصف علی زرداری کے اس میں کردار کو تنقید کا نشانہ بنایا جا رہا ہے۔ پاکستان کیلئے بین الاقوامی امداد کو بھیک مانگنے سے مشاہبت دی جا رہی ہے۔ کالم نگار اس بات پر تنقید برائے تنقید کرتے وقت یہ بات پس پشت ڈال دیتے ہیں کہ بیرونی طاقتیں اگر بھیک دینا چاہیں تو بھیک کے مستحق کئی افریقی اور دیگر ایشیائی ممالک بھی ہیں۔ پاکستان کی Strategic پوزیشن اور پاکستان کی موجودہ حکمت عملی کی بدولت‘ پاکستان کی بقاء صرف ہمارے ہی نہیں بلکہ بیرونی طاقتوں کے مفاد میں بھی ہے۔ ہمیں صدر زرداری کی اس بات کو Credit دینا چاہئے کہ مغربی طاقتیں جو پاکستان کو ’’ناکام ریاست‘‘ کا نام دیتی ہیں وہ پیپلز پارٹی کی کامیاب سفارتی کوششوں کی بدولت (Exteme global recession) کے باوجود ایک مستحکم پاکستان میں investکرنے کو تیار ہیں۔ ہمارے لیڈران‘ بارہا یہ بھی کہہ چکے ہیں کہ ہمیں یہ امداد خاص کر امریکی امداد مشروط یعنی شرائط کے ساتھ منظور نہیں۔ یہ بات ہماری جمہوری حکومت کی اپنے اور اپنے عوام پر خود اعتمادی کا ثبوت نہیں تو اور کیا ہے۔
(سارہ واسطی راولپنڈی )