اور ہم یتیم ہو گئے !

ایڈیٹر  |  ڈاک ایڈیٹر
    اور ہم یتیم ہو گئے !

مکرمی! 2006ء میں بندہ بطور سیکیورٹی گارڈ نوائے وقت میں بھرتی ہوا‘ یوں ایک سفر شروع ہو گیا 4 سال کا عرصہ دفتر میں مختلف ڈیوٹیا ں سر انجام دیتے ہوئے گزر گیا لیکن آتے جاتے اس عظیم ہستی کا دیدار نصیب ہوتا جسے دیکھنے اور ملنے کو بڑے بڑے لوگ ترستے تھے۔ 29 دسمبر 2010 کو اس عظیم ہستی کی خواہشں پر ان کی رہائش گاہ ڈیوٹی لگ گئی اور اسطرح ہماری خوش قسمتی کچھ اور بڑھ گئی کہ اس عظیم ہستی کے ہر وقت نزدیک رہنے کا مو قع میسر ہوا ۔ عرصہ پانچ سال میں مجید نظامی جیسی عظیم ترین ہستی نے شفقت کے تمام سائے ہمارے سروں پر تان دیئے حتیٰ کہ مجھے ہارٹ اٹیک ہوا انہیں کی شفقت رنگ لائی اور مجھ جیسے ناچیز پر مالی امداد کی برسات کر دی اور حوصلے جو دیئے الگ دفتر آتے جاتے میرا حال چال پوچھتے اور صحت کا خاص خیال رکھنے کی نصیحت فرماتے ۔ لیکن اچانک 8 جولائی 2014 بروز منگل ایسی منحوس گھڑی آئی کہ وہ عظیم ہستی ٹانگ میں تکلیف کی وجہ سے ہسپتال گئے اور 18 دن کی مختصر مدت میں خالق حقیقی سے جاملے ۔ ڈاکٹر مجید نظامی صاحب (مرحوم) قوم کا سرمایہ تھے ۔ اللہ تعالیٰ انہیں خاص کرم فرماتے ہوئے جوار رحمت میں جگہ عطافرمائے۔ ان کے جانے کے بعد محسوس ہو رہا ہے کہ آہ ہم سب یتیم ہو گئے۔(رانا ذوالفقارعلی 0315-4030187 )