نیاء سال اُس کو دکھائوں کیسے؟

ایڈیٹر  |  ڈاک ایڈیٹر
نیاء سال اُس کو دکھائوں کیسے؟

آج سے کچھ دن پہلے
خوشیاں میرے گھر کی باندی
بچے میرے۔۔۔۔۔۔
سب سلامت‘‘
جدائی کا احساس نہ تھا
دل کبھی اداس نہ تھا
بچوں کو پا کر۔۔۔۔
سب دکھ بُھولی
اور۔۔۔۔۔
غم بھی میرے پاس نہ تھا
توتلی باتیں۔۔۔۔
چاند سے چہرے۔۔۔۔
مجھ کو ہنسائے رکھتے تھے
ہر طرف پھول برستے تھے
آہ اچانک۔۔۔۔
ظالم دشمن نے۔۔۔۔
میرا بچہ چھین لیا‘۔۔۔۔
اُف مجھ پر کتنا۔۔۔۔
ظلم کیا۔۔۔۔
لخت جگر کو پاس نہ پا کر
ان نینا نیر بہاتے ہیں
اُس کے ساتھ ۔۔۔۔
گزارے لمحے خون کے آنسو
رلاتے ہیں۔۔۔۔
اَہ میرا پیارا بچہ
اپنے پیاروں سے
بعید ہوا‘‘۔۔۔۔
لیکن‘‘۔۔۔۔۔
فرمان نبی صلی اللہ علیہ وسلم O
 کے مطابق علم کی راہ میں
شہید ہوا‘‘۔۔۔
آہ ملاقات اُس سے
اب ممکن نہیں ہے
میں یہ غم دل سے
بھلائوں تو ۔۔کیسے
نیاء سال اُس کو
دکھائوں۔۔۔۔
تو کیسے؟
(نون الف‘ پاک پتن)