خودمختاری اور قومی سلامتی کو لاحق خطرات نظرانداز نہیں کئے جا سکتے: نیول چیف

لاہور (خصوصی رپورٹر) چیف آف دی نیول سٹاف ایڈمرل محمد ذکا ءاللہ نے کہا ہے کہ ہمارے پڑوس میں ایک حاکمانہ اور جابرانہ سوچ مستحکم ہو رہی ہے، اپنی خودمختاری اور قومی سلامتی کو لاحق خطرات کو نظرانداز نہیں کر سکتے، علاقائی اور عالمی سطح پر محرکات میں تیزی سے آنے والی تبدیلیوں کی بنا پر ہم پر یہ بھاری ذمہ داری عائد ہوتی ہے کہ ہم عسکری اور سیاسی سطح پر موثر اور باخبر رہیں۔افسران سخت محنت کریں وہ جمعہ کو پاکستان نیوی وار کالج لاہور میں44وےں پاکستان نیوی سٹاف کورس کے کانووکیشن کی تقریب سے خطاب کر رہے تھے۔ نےول چےف نے مزید کہا کہ پاکستان نیوی کو ایک جدید با صلاحیت نیوی کے طور پر دیکھتا ہوں جو لامتناہی تصادم کی صورت حال میں قومی سلامتی اور ملکی دفاع میں موثر طریقے سے اپنا کردارادا کرے اور وسیع سوچ کے ساتھ علاقائی سطح پر اپنا اثرو رسوخ برقرار رکھنے کی صلاحیت رکھتی ہو۔ انہوں نے واضح کیا کہ ان کی بنیادی توجہ معیاری افرادی قوت کی تیاری اور دفاعی حربی استعدادکار میں اضافے پرہے تاکہ حکومت کی طرف سے تفویض کی جانےوالی کسی بھی ذمہ داری کو پورا کرنے کے لئے ہمہ وقت تیار رہیں۔

نیول چیف