پنجاب کے سرکاری سکولوں میں 5 سال سے کم عمر بچوں کے داخلے پر پابندی ختم

لاہور (میاں علی افضل سے) پنجاب حکومت کے احکامات پر  صوبے کے تمام سرکاری سکولوں میں 5 سال سے کم عمر بچوں کے داخلے پر عائد پابندی ختم کر دی گئی۔ اب اڑھائی سے تین سال تک کے بچوں کو بھی سرکاری سکولوں میں داخلہ مل سکے گا۔ پابندی ختم کرنے کا مقصد سکول سے باہر موجود 40 لاکھ بچوں کو سکول میں لانا ہے۔ پابندی کی وجہ سے شہریوں کے بچے 5 سال کی عمرسے پہلے سکول نہیں جا پاتے تھے اور مجبوراً پرائیویٹ  سکولوں میں داخلہ لینے پر مجبور ہو جاتے جبکہ چند سال  بعد فیسیں بھرنے پر تعلیم جاری نہیں رکھ پاتے تھے۔ 5 سال سے کم عمر بچوں کیلئے سرکاری سکولوں میں خصوصی کمیٹیاں بنائی جائیں گی  جو ان بچوں کو سکولوں میں فوری داخلہ دلوائیں گی۔ وزیراعلیٰ پنجاب میاں شہبازشریف کے احکامات پر سیکرٹری عبدالجبار شاہین کی جانب سے پنجاب  کے تمام اضلاع کے ای ڈی اوز کو ہدایات جاری کر دی گئیں۔ اس حوالے 40 لاکھ بچوں کو سرکاری سکولوں میں لانے کا ٹارگٹ دیا گیا ہے۔ اس کیلئے تمام  سکولوں کے پرنسپلز کو تمام تر وسائل کے استعمال کی اجازت دی گئی ہے اور ٹیچروں کو بھی خصوصی ہدایات جاری کی گئی ہیں۔ سکولوں سے باہر موجود بچوں کو سکولوں میں لانے کیلئے روزانہ  کی بنیاد پر رپورٹ تیار کی جائے گی اور  یہ رپورٹس سینئر افسران کو بھجوائی جائے گی جبکہ مختلف ٹیموں کے ذریعے  اس تمام عمل کی مانیٹرنگ بھی کی جائے گی۔ غفلت کے مرتکب ٹیچروں اور ہیڈ مسٹریس اور پرنسپل کے خلاف بھرپور کارروائی کی جائے گی‘ جرمانے کئے جائیں گے جبکہ بہت  زیادہ غفلت برتنے پر  معطل بھی کیا جائے گا۔ ہر ماہ تمام ای ڈی اوز کا اجلاس بھی ہوگا جس میں ہر ضلع کی کارکردگی کا تفصیلی جائزہ لیا جائے گا۔