پاکستان میں 5 لاکھ افراد کیلئے ایک سائیکا ٹرسٹ ہے: ماہرین ذہنی امراض

لاہور(لیڈی رپورٹر)پاکستان میں ذہنی امراض کاشکاربچوںکی تعدادبہت زیادہ ہے جبکہ پانچ لاکھ افراد کیلئے صرف ایک سائیکاٹرسٹ ہے ، تعلیم کی کمی، آبادی میں اضافہ، دہشتگردی اور صدمات ذہنی امراض کی بڑی وجوہات ہیں۔ صوبہ خیبرپی کے کے بچے ڈرون حملوںاور دہشتگردی کی وجہ سے ڈپریشن کاشکارہورہے ہیں۔ذہنی امراض کے ماہرین نے ان خیالات کااظہارگذشتہ روزمقامی ہوٹل میں پاکستان سائیکاٹرک سوسائٹی کے زیراہتمام بچوںاور نوجوانوںمیں نفسیاتی بیماریوں، ملک میں دہشتگردی کے نفسیاتی اثرات، خودکشی کے بڑھتے ہوئے رجحانات وجوہات اورتدارک کے حوالے سے جاری سہ روزکانفرنس کے دوسرے روزمختلف سیشنوںسے خطاب میں کیا۔ مقررین میں پروفیسرڈاکٹر محمدناصرسیدخان، پروفیسر ڈاکٹر خالدہ ترین، پروفیسر شاہدمنیر، پروفیسر افضل جاوید، پروفیسر ہیلن ہرمن، پروفیسر خالدمفتی، پروفیسرمحمد سلطان، پروفیسرامتیازڈوگر، پروفیسر شجاعت نقوی، ،پروفیسرسلیم صدیقی ودیگر شامل تھے۔