قانون نافذ کرنیوالے اداروں کی کارکردگی مایوس کن، جرائم کی شرح میں زبردست اضافہ

لاہور (احسان شوکت سے) لاہور میں ڈکیتی، قتل و غارتگری سمیت دیگر سنگین جرائم کی شرح میں اضافہ ہو گیا۔ رواں برس 2015ء میں صرف 2 ماہ کے دوران سنگین جرائم کے 1200 سے زائد مقدمات درج ہوئے۔ اس صورتحال سے شہری شدید خوف و ہراس کا شکار ہیں۔ ڈکیتی و راہزنی کے 622 مقدمات درج ہوئے۔ گاڑیاں، موٹر سائیکلیں اور دیگر وہیکلز چھیننے کے 61 جبکہ وہیکلز چوری کے 497 مقدمات درج ہوئے۔ اسکے علاوہ قتل و غارت گری کے 41 مقدمات درج ہوئے ہیں۔ جن میں سب سے زیادہ سنگین جرائم کی وارداتیں صدر ڈویژن میں 273، ماڈل ٹاؤن ڈویژن میں 209، کینٹ ڈویژن میں 205، اقبال ٹاؤن ڈویژن میں 201، سٹی ڈویژن میں 179 جبکہ سول لائنز ڈویژن میں 141 وارداتیں ہوئیں۔ گزشتہ سال 2014ء کی نسبت رواں سال 2015ء کے پہلے 2 ماہ کے دوران قتل کے علاوہ گاڑیاں چھیننے کے واقعات میں بھی اضافہ دیکھنے میں آیا جس سے شہری شدید پریشانی و خوف کا شکار ہیں جبکہ اسکے برعکس قانون نافذ کرنیوالے اداروں کی کارکردگی انتہائی مایوس کن ہے۔