لاہور : چھت سے 2 بچوں کو لیکر کودنے والی خاتون دم توڑ گئی

لاہور (سٹاف رپورٹر+ نوائے وقت رپورٹ) لاہور کے علاقے فیصل ٹاﺅن میں ایل ڈی اے فلیٹس کی چھت سے دو بچوں کو لیکر کودنے والی خاتون بھی گزشتہ روز جناح ہسپتال میں دم توڑ گئی۔ بتایا گیا ہے چشتیاں، بہاولنگر کی رہائشی عابدہ پروین اپنے شوہر محمد اسلام کے پاس دو ماہ قبل لاہور منتقل ہوئی تھی اور ایل ڈی اے فلیٹس کے ایک کمرے میں رہائش پذیر تھی۔ عابدہ کے شوہر اسلام کے مطابق اسکی بیوی موبائل فون لیکر دینے کی ضد کر رہی تھی جس پر جھگڑا ہوا اور وہ سو گیا۔ علی الصبح عابدہ پروین نے اپنے 10 ماہ کے بیٹے صدام حسین اور بیٹی ڈیڑھ سالہ اُم فرویٰ کو ساتھ لیا اور چھت پر چلی گئی جہاں سے اس نے پہلے معصوم صدام حسین کو پہلے چھت سے پھینکا پھر بیٹی ام فرویٰ کو لیکر خود بھی کود گئی۔ دھماکے سے گرنے کی آواز سن کر لوگ اکٹھے ہوئے اور ماں، دو بچوں کو ریسکیو اہلکاروں کی مدد سے ہسپتال پہنچایا تاہم معصوم شیرخوار صدام حسین دم توڑ چکا تھا جبکہ عابدہ اور اُم فرویٰ کی حالت نازک تھی۔ بچی کی حالت اب بہتر بتائی جا رہی ہے جو ماں کی شفقت سے محروم ہو چکی ہے۔ پولیس نے عابدہ پروین کے خلاف قتل، اقدام قتل اور خودکشی کی دفعات کے تحت مقدمہ درج کیا تھا تاہم عابدہ کے شوہر اسلام نے کہا تھا کہ اس نے اپنی بیوی کیخلاف مقدمہ پولیس کے کہنے پر درج کرایا۔ عابدہ کو وہ معاف کر دیگا مگر اسکی نوبت نہ آئی۔ پولیس نے عابدہ کی نعش اسکے شوہر اور بھائی اسلم کے حوالے کر دی۔ ہوٹل میں ویٹر کا کام کرنیوالا اسلم اپنا گھر اجڑ جانے پر صدمے سے نڈھال ہوگیا۔