نامناسب سرگرمیاں، دو درجن ملکی، غیر ملکی این جی اوز کی مانیٹرنگ شروع

لاہور (جواد آر اعوان / نیشنل رپورٹ) ملک بھر میں سرگرم تقریباً 2 درجن مقامی اور عالمی این جی اوز کو واچ لسٹ میں شامل کر لیا گیا ہے۔ ان غیر سرکاری تنظیموں کی سرگرمیوں پر کڑی نظر رکھنے کی ہدایت کر دی گئی ہے۔ سکیورٹی ذرائع نے ’’دی نیشن‘‘ کو بتایا کہ ان این جی اوز میں امریکہ، یورپ، سکینڈے نیوین ممالک کے مسلمانوں کی جانب سے چلائی جانیوالی تنظیمیں بھی شامل ہیں۔ ان این جی اوز کو بسا اوقات ایسی نامناسب سرگرمیوں میں ملوث دیکھا گیا تھا جو بعد میں براہ راست یا بالواسطہ طور پر ملکی مفادات کو نقصان پہنچا سکتی تھیں۔ ذرائع نے بتایا کسی این جی اوز کو واچ لسٹ میں رکھنے کا یہ مطلب نہیں یہ پورا ادارہ غیر مناسب سرگرمیوں میں ملوث ہے۔ بعض معاملات میں ان تنظیموں سے تعلق رکھنے والے بعض افراد اپنے مینڈیٹ کی خلاف ورزی کرتے ہوئے ایسی سرگرمیوں میں ملوث ہیں، بعض کیسوں میں پوری تنظیم ہی ان نامناسب اقدامات پر عمل پیرا ہے۔ ان تنظیموں کا تعلق خیبر پی کے، قبائلی علاقوں اور بلوچستان کے کچھ علاقوں سے ہے۔ بعض تنظیمیں آزاد کشمیر اور پنجاب میں بھی سرگرم ہیں۔ عالمی خیراتی اداروں سے منسلک بعض مقامی این جی اوز کو بھی واچ لسٹ میں رکھا گیا ہے۔ ذرائع نے بتایا ان مقامی این جی اوز کے بعض ارکان نے اپنے عالمی ڈونرز کے ساتھ مل کر ملتان اور ڈیرہ غازی خان کے دورہ کے دوران بعض کالعدم تنظیموں کے ارکان سے ملاقاتیں کی تھیں۔ ایک این جی او کے بعض افراد نے جنوبی پنجاب سے سرگرم پابندی لگائی گئی تنظیموں کے متعلق معلومات اکٹھی کرنے والے غیر ملکی نیٹ ورک کے ساتھ ملکر کام کرنے کا اعتراف کیا ہے۔ ذرائع نے اس این جی او کا نام بتانے سے گریز کیا۔