امام ابو حنیفہؒ اسقامت، استقلال کا پیکر تھے، دینی خدمات بے مثال ہیں، مقررین کانفرنس

لاہور(خصوصی نامہ نگار) سعودی عرب کی وزارت مذہبی امور کے زیر اہتمام جدہ میں’’ امام ابو حنیفہ ؒ کانفرنس‘‘ کا انعقاد ۔کانفرنس میں مولانا عبدالحفیظ مکی، ابوالقاسم النعمانی، محمد حنیف جالندھری، مولانا محمد احمد لدھیانوی، سعید احمد عنایت اللہ، آفتاب کھوکھر سمیت مختلف ممالک سے تعلق رکھنے والے افراد نے کثیر تعداد میں شرکت کی۔کانفرنس میں پاکستان میں آرمی پبلک سکول پر دہشت گردوں کے حملے کو مجرمانہ عمل قرار دیتے ہوئے اسکی شدید الفاظ میں مذمت کی گئی۔کانفرنس میں مقررین نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ امام ابو حنیفہ حمیت، استقامت اور استقلال کا پیکر تھے انکی عظمت اُس دور میں بھی عظیم تھی اور آج کے دور میں بھی عظیم ہے۔ امام ابو حنیفہ کا دور ، نبوت کے دور کے انتہائی قریب ہے‘ امام ابو حنیفہ نے جلیل القدر صحابی انسؓ بن مالک کی زیارت اور دینی مسائل سے استفادہ کیا۔ تاریخ اسلام میں پہلی مرتبہ احکاماتِ شریعت کو تحریری طور پر مرتب کیا اور عبادات ، اخلاقیات، حسن معاشرت و دیگر احکامات پر تقریباً 83 ہزار مسائل لکھے۔ جو شخص بھی انکی مجلس میں آتا وہ انکے علمی دلائل کا قائل ہو جاتا۔ اما م ابو حنیفہ علمی مشغلوں کیساتھ ساتھ تقویٰ، پرہیز گاری اور زہد میں بھی اپنی مثال آپ تھے، اہل علم اور اہل تقویٰ کا فیصلہ ہے کہ تمام صحابہ میں سیدنا ابوبکرؓ امام ہیں اور آئمہ اربعہ میں امام ابو حنیفہ تمام اہل علم کے امیر اور استاد ہیں۔