گریڈ 18کے افسر کی ڈی سی او لاہور تعیناتی، سینئر عہدوں پر کام کرنےوالے جونیئر افسران خوش

لاہور (شعیب الدین سے) ضلعی حکومت لاہور میں متعدد افسران اپنے سے سینئر عہدوں پر کام کر رہے ہیں۔ مگر اب گریڈ 18 کے افسر احد چیمہ کے گریڈ 20/21 کے عہدے پر ڈی سی او تعینات کئے جانے سے یہ افسر خوش ہیں کہ اب انہیں پوچھنے والا کوئی نہیں ہوگا۔ ضلعی حکومت لاہور میں اس وقت چیف انجینئر (گریڈ 20) کے ایگزیکٹو ڈسٹرکٹ آفیسر ورکس اینڈ سروسز کے عہدے پر گریڈ 19 کے سپرنٹنڈنگ انجینئر چودھری منظور تعینات ہیں۔ ایگزیکٹو ڈسٹرکٹ آفیسر انفارمیشن ٹیکنالوجی کی گریڈ 19 کی آسامی پر گریڈ 18 کے افسر عمر سعید تعینات ہیں۔ ڈسٹرکٹ آفیسر پلاننگ کی گریڈ 19 کی پوسٹ پر گریڈ 17 کے لوکل فنڈ آڈٹ سے ڈیپوٹیشن پر آنےوالے آڈٹ آفیسر محمد آصف سندھو تعینات ہیں۔ آصف سندھو 2006ءتک گریڈ 11 کے محکمہ لوکل فنڈ آڈٹ کے آڈیٹر تھے۔ جنہیں 2006ءمیں براہ راست گریڈ 16 میں آڈٹ آفیسر ترقی دے دی گئی۔ علاوہ ازیں آصف سندھو ڈی او پلاننگ کے جس عہدے پر کام کر رہے ہیں وہ پی اینڈ ڈی محکے کی پوسٹ ہے اور وہاں اسی محکمے سے آنےوالا گریڈ 19 کا افسر تعینات ہو سکتا ہے۔ اس طرح ان کے قلم سے نکلنے والے دستخط قانونی طور پر غیرقانونی ہیں۔ علاوہ ازیں پی اینڈ ڈی ڈیپارٹمنٹ سے آنےوالے گریڈ 17 کے دو سینئر افسران آصف سندھو کے ماتحت کام کرنے پر مجبور ہیں۔ علاوہ ازیں شعبہ ورکس اینڈ سروسز میں ڈی ڈی او روڈز اور ڈی ڈی او بلڈنگز کی گریڈ 17 کی آسامیوں پر محکمہ سی اینڈ ڈبلیو کے ایس ڈی او تعینات کرنے کی بجائے ضلعی حکومت کے گریڈ 16 کے سبب انجینئر تعینات کئے گئے ہیں۔ جن میں قیصر فاروق، شوکت بٹ، یوسف تانی، اسلم جنجوعہ اور دیگر سب انجینئر شامل ہیں۔ ضلعی حکومت کے تعیناتیوں سے محروم افسران کو اعلیٰ عدلیہ سے شکوہ ہے کہ وہ چیئرمین نیب کے عہدے پر تو صرف اہل شخص کی تقرری چاہتی ہے مگر کروڑوں اربوں روپے کے ترقیاتی کاموں کی ذمہ داریاں نچلے گریڈوں کے افسران کو دیئے جانے کا نوٹس نہیں لیا جارہا۔