مطالبات کے حق میں اساتذہ‘ طلبا کا مظاہرہ‘ 6 گھنٹے تک دھرنا دیا

لاہور (اپنے نمائندے سے) پنجاب حکومت کی طرف سے 26 کالجز کی نجکاری اور بورڈ آف گورنرز کی تعلیمی اداروں میں تشکیل کے خلاف گذشتہ روز جوائنٹ ایکشن کمیٹی، پنجاب پروفیسرز اینڈ لیکچررز ایسوسی ایشن اور سٹوڈنٹس کونسل کے سینکڑوں طلبہ نے فیصل چوک پر بسیں کھڑی کر کے سکول و کالج کے اوقات میں دونوں اطراف ٹریفک بلاک کر دی اور کالجوں کی مالی خودمختاری اور بورڈ آف گورنرز کے خلاف نعرے بازی کرتے رہے اور 6 گھنٹے تک دھرنا دیا جس سے ٹریفک کا نظام درہم برہم ہو گیا اور گاڑیوں کی لمبی لائنیں لگی رہیں۔ اساتذہ اور طلبا کی ریلی کا آغاز ناصر باغ سے ہوا‘ جس کی قیادت ڈاکٹر زاہد شیخ‘ قیصر شریف اور دیگر نے کی۔ مظاہرین کا کہنا تھا کہ پنجاب حکومت جب تک فیصلہ واپس نہیں لیتی ہمارا احتجاج جاری رہے گا مقررین کا کہنا تھا کہ اس حکومتی اقدام سے ایک طرف تعلیمی اداروں میں انارکی پھیلے گی اور دوسری طرف تعلیم غریبوں کیلئے مہنگی ہوجائے گی۔ اس لئے حکومت ےہ فیصلہ واپس لے بصورت دیگر ہم پورے پنجاب میں ساڑھے چار سو کالجوں میں مکمل تالہ بندی کا اعلان کر دینگے اورتعلیمی بائیکاٹ جاری رہے گا۔