بورڈ آف ڈائریکٹر لیسکو افسروں کی تعیناتیوں میں رکاوٹ، وزیراعظم سے نوٹس کا مطالبہ

بورڈ آف ڈائریکٹر لیسکو افسروں کی تعیناتیوں میں رکاوٹ، وزیراعظم سے نوٹس کا مطالبہ

لاہور (نیوز رپورٹر) لیسکو کے بورڈ آف ڈائریکٹر افسران کی ترقیوں کے بعد تعیناتیوں میں رکاوٹ بن گئے۔ وزارت پانی و بجلی اور پیپکو کی طرف سے 2 ماہ قبل لیسکو کے گریڈ 18، 19 اور 20 کے 11 افسران کو ترقی دی گئی۔ مگر بورڈ آف ڈائریکٹرز کی عدم توجہ، نااہلی کے باعث گزشتہ اڑھائی ماہ سے افسران خوار ہو رہے ہیں۔ متاثرہ افسران نے وزیراعظم سے اس صورتحال کا فوری نوٹس لینے کا مطالبہ کر دیا۔ ذرائع کے مطابق ملک بھر کی تقسیم کار کمپنیوں میں گریڈ 19 کے ایس ای (سپرنٹنڈنٹ انجینئر) اور گریڈ 20 کے چیف انجینئرز کی تعیناتی کا اختیار چیف ایگزیکٹو آفیسر کے پاس ہے مگر لیسکو میں بورڈ آف ڈائریکٹر نے وزارت پانی و بجلی اور پیپکو کے تمام احکامات کو ماننے سے انکار کرتے ہوئے ایس ای اور چیف انجینئرز کی تعیناتی کا اختیار اپنے پاس رکھا ہوا ہے۔ اڑھائی ماہ سے بورڈ آف ڈائریکٹر کا اجلاس نہیں ہو رہا۔ وزارت پانی و بجلی اور پیپکو جن افسروں کو ترقی دی گئی ان میں طارق پاشا، محمود عالم، ظفر اقبال، مجاہد اسلام بااللہ، ساجد رضا، خالد بشیر بٹ، اظہار الطاف، محمد شفیق، منصورالحق شامل ہیں۔ بعض افسران کی ریٹائرمنٹ قریب ہے۔ ان میں شدید بے چینی پائی جا رہی ہے۔ افسران کا کہنا ہے اتنے سال کی سروس کے بعد ہمیں اس عہدے پر تعینات نہ کرنا زیادتی ہے۔ چیف ایگزیکٹو لیسکو ارشد رفیق کا کہنا ہے تعیناتی کا اختیار میرے پاس نہیں۔ دوسری طرف لیسکو کمپنی سیکرٹری میاں افضل کا کہنا ہے اجلاس بلایا جاتا ہے بزنس متاثر نہیں ہو رہا۔