بجلی کی کمپنیوں نے لائن لاسز پورے کرنے کےلئے ایک ارب 21 کروڑ کے اضافی بل ڈال دیئے

لاہور (ندیم بسرا سے) 22 فیصد لائن لاسز کوکم کرنے اور بجلی چوری کا نقصان پورا کرنے کے لئے پنجاب کی 5 دسٹری بیوش کمپنیوں نے گزشتہ7 ماہ کے دوران مالی گھریلو اور صنعتی صارفین سے تقریباً 1 ارب 21 کروڑ روپے کے اضافی بل بھجوا کر زبردستی وصولی کی ہے۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ گزشتہ سال 2009ءاور رواں برس 2010ءمیں پیپکو ایم ڈی طاہر بشارت چیمہ نے تمام ڈسٹری بیوشن کمپنیوں کے چیف ایگزیکٹوز کو ہدایات دی تھی کہ ریکوری کو یقینی بنانے اور لا ئن لاسز کو کم کرنے کے لئے کوئی بھی اقدامات اٹھائیں جس کے تحت ڈسٹری بیوشن کمپنیوں کے چیف ایگزیکٹوز اور دیگر نے اپنے روایتی ہتھیار کو استعمال کرتے ہوئے صارفین کو جون 2009ءسے جنوری 2010ءکے ماہ میں ہر ماہ ایڈوانس ریڈنگ اوور بلنگ کی صورت میں تمام سب ڈویژن کی سطح پرصارفین کو 18سو روپے سے لیکر8ہزارروپے تک زائد بل بھجوائے۔ صارفین کو مجوعی طور پر 1کروڑ 5 لاکھ کے قریب اضافی یونٹس ڈالے۔