ورلڈکپ اولمپک گولڈ میڈل جیتیں‘ پولیس میں کانسٹیبل اے ایس آئی بھرتی ہو جائیں

لاہور ( معین اظہر سے) ہوم سیکرٹری پنجاب نے پولیس میں سپورٹس کی سیٹوں پر بھرتی کے لئے نئی پالیسی منظوری کے لئے وزیر اعلی پنجاب کو بھجوا دی جس ملک و قوم کا نام روشن کرنے والے کھلاڑیوں کے لئے انتہائی مضحکہ خیز پالیسی ترتیب دی گئی ہے جس کے تحت ورلڈ کپ یا اولمپک گولڈ میڈل جیتیں اور پولیس میں کانسٹیبل یا اے ایس آئی بھرتی ہوجائیں کی پالیسی بنائی گئی ہے جبکہ ملک میں سیاسی سفارشوں پر مختلف دور میں لوگ ڈی ایس پی بھی بھرتی ہوتے رہے ہیں جبکہ ملک کا نام روشن کرنے والے افراد کو بھرتی کے لئے میٹرک اور ایف اے بھی کرنا پڑے گا بھرتی ہونے کے بعد ورلڈ کپ جیتنے یا اولمپک گولڈ میڈل لینے کی صورت میں ان کو پرموشن بھی نہیں دی جاسکے گی۔ تفصیلات کے مطابق وزیر اعلی پنجاب نے وزیر کھیل کی سربراہی میں ایک کمیٹی تشکیل دی تھی جسے پولیس رولز میں تبدیلی کر کے سپورٹس مین کو پولیس میں بھرتی کرنے کے لئے سفارشات تیار کرنے کی ہدایت کی گئی تھی ۔وفاقی سروسز سے تعلق رکھنے والے افسران نے سپورٹس مین و سپورٹس ویمن کو پولیس میں بھرتی کے لئے انتہائی مضحکہ خیز پالیسی بنوائی ۔ ہوم سیکرٹری پنجاب اعظم سلیمان نے وزیر اعلیٰ پنجاب کو جو پالیسی بھجوائی اس کے مطابق سپورٹس پر بھرتی ہونے والے افراد و خواتین کو ایک ہائی پاور بورڈ کے ذریعے بھرتی کیا جائے گا۔ اس بورڈ کا سربراہ ایڈیشنل آئی جی کے عہدہ کا افسر ہو گا۔ کانسٹیبل یا اے ایس آئی کی پوسٹ پر صرف بھرتی کیا جاسکے گا ڈیوٹی بھی پوری ادا کرنی پڑے گی ۔ ان کو فزیکل یا ایجوکیشن کی بنیاد پر بھر تی کے لئے کوئی چھوٹ نہیں دی جائے گی۔ میڈل یا اچھی کارکردگی پر آﺅٹ آف ٹرن پرموشن نہیں مل سکے گی تاہم کیش انعام دیا جاسکتا ہے۔ کانسٹیبل کے لئے بھرتی کم از کم جو سپورٹس مین بھرتی ہو سکیں گے ان میں اولمپک میں گولڈ میڈل ، برونز میڈل ، یا سلور میڈل لینے والے، ورلڈ کپ ، یا ورلڈ چمین شپ جیتنے والے، اشیا کپ جیتنے والے، سیف گیمز، یا نیشنل چمین جیتنے والے کھلاڑی ہی کانسٹیبل بھرتی ہو سکیں گے۔ اس کے لئے کھلاڑی کا میٹرک ہونا ضروری ہے اس کی عمر 18 سے 22 سال ہونا ضروری ہے۔ جبکہ بورڈ اتنے بڑے ٹورنامنٹ جیتنے والے کھلاڑیوں کا ٹرائل بھی لے گا۔ اسی طرح اے ایس آئی کے لئے اولمپک ، ورلڈ کپ، ایشین چمیپن شپ، کامن ویلتھ گیمز ، ساوتھ ایشنیں گیمز کم از کم جتنا ضروری ہے۔ اس کی عمر18 سے 25 سال ہوگی اس کا ایف اے ہونا لازمی ہے ۔ جبکہ اس کا بھی ٹرائل لیا جائے گا۔