ڈیڑھ ارب کی ٹیکس چوری میں حیران کن انکشاف، کلکٹر زیبا، ڈپٹی رضوان ’’باخبر‘‘ تھے

لاہور (سید شعیب الدین سے) لاہور ڈرائی پورٹ (مغلپورہ) پر ایک ارب 43 کروڑ روپے کی ٹیکس چوری کے بارے میں حیران کن انکشاف ہوا ہے کہ سابق کلکٹر آپریزمنٹ زیبا حئی اظہر اور ڈپٹی کلکٹر رضوان صلابت اس ’’واردات‘‘ سے ’’باخبر‘‘ تھے۔ باخبر ذرائع کے مطابق کسٹم کے سابق چیف کلکٹر اور موجودہ ڈائریکٹر جنرل انٹیلی جنس لطف اللہ ورک کی ہدایت پر ان کے ساتھ منسلک سینئر کسٹم افسر نے زیبا حئی اظہر کو فون پر اطلاع دی تھی کہ ’’ٹن پلیٹ اور جی بی پلیٹ‘‘ جن پر 20 فیصد ڈیوٹی، 17 فیصد سیلز ٹیکس و دیگر ٹیکسز ہیں کو الیکٹریکل سکیلوں سٹیل شیٹ کے نام پر کلیئر کرایا جارہا ہے جس پر ڈیوٹی صفر ہے مگر کلکٹر آپریزمنٹ زیبا حئی اظہر نے یہ تسلیم کرنے سے انکار کردیا جس کے بعد سابق چیف کلکٹر لطف اللہ ورک نے انہیں بذریعہ تحریر باضابطہ آگاہ کیا مگر زیبا حئی اظہر اور رضوان صلابت نے کارروائی نہیں کی۔ لاہور ڈرائی پورٹ کی نئی انتظامیہ نے اس معاملے کا نوٹس لے لیا۔ کلکٹر زاہد کھوکھر کی ہدایات پر پرنسپل آپریزر ملک عزیز نے معاملے کی جانچ پڑتال کی تو صرف 2 سال میں ایک ارب 47 کروڑ کی ڈیوٹی چوری سامنے آگئی۔ ملزم کلیئرنگ ایجنٹس شریف بھٹی، سعید بھٹی، اکرام الحق اور احتشام الحق نے پولیس کی مدد سے ملک عزیز کو قتل کے 9 سال پرانے مقدمے میں غیر قانونی طور پر اٹھوا لیا اور 12 گھنٹے بعد اسے حبس بیجا سے رہائی ملی۔ ڈیوٹی چوری کرنے والے درآمد کنندگان نے ڈیوٹی ادا کرنا شروع کردی ہے۔ انعام ٹریڈرز، فہیم سٹیل لنڈا بازار اور کراچی کی فرم سٹار ڈم ڈیڑھ کروڑ روپے سے زائد کی ڈیوٹی جمع کرا چکی ہیں۔