طاہر القادری استقبال کیلئے آنے والوں کو ساتھ لے کر دھرنا دے سکتے ہیں

لاہور (فرخ سعید خواجہ) ڈاکٹر طاہر القادری کی 23 جون کو پاکستان آمد عوامی اور سیاسی حلقوں میں اہمیت اختیار کی گئی ہے۔ سانحہ لاہور کے بعد ڈاکٹر طاہر القادری کی اسلام آباد ائرپورٹ پر آمد پر لوگوں کی نظریں لگ گئی ہیں، دیکھنا ہے حکومت استقبال کیلئے فری ہینڈ دیتی ہے یا اسے محدود کرنے کی کوششیں کرے گی۔ اس بات کا بھی خدشہ ہے کہ ڈاکٹر طاہر القادری اپنے استقبال کیلئے آنے والوں کو ساتھ لے کر اسلام آباد میں دھرنا دے سکتے ہیں۔ حکمرانوں کو ان تمام سوالوں کا سامنا ہے۔ ذرائع کے مطابق وزیراعظم محمد نواز شریف کی صدارت میں ہونے والے اعلیٰ سطح کے اجلاس میں ان تمام سوالوں پر غور کیا گیا۔ ذمہ دار ذرائع نے بتایا کہ وزیراعظم محمد نواز شریف کو مشورہ  دیا گیا ہے کہ ایسی حکمت عملی اختیار کی جائے جس سے سانپ مر جائے اور لاٹھی بھی نہ ٹوٹے۔ استقبال کیلئے فری ہینڈ دیا جائے مگر حساس علاقوں کو کنٹینر لگا کر بند کر دیا جائے۔ اجلاس میں وزیراعظم نواز شریف کے سیاسی جماعتوں کے رہنمائوں سے ملاقاتوں کے سلسلے کو سراہا گیا۔ مشورہ  دیا گیا کہ یہ سلسلہ برقرار رہنا چاہئے۔