تخریب کاری، سوئی سے کشمور آنیوالی گیس پائپ لائن تباہ، پنجاب کی انڈسٹری، سی این جی سیکٹر کو سپلائی بند

لاہور (نیوز رپورٹر) پنجاب اور سندھ کی سرحد کے قریب تخری کاروں نے سوئی سے کشمور کے راستے آنیوالی 30 انچ کی گیس پائپ لائن کو اڑا دیا جس کے نتیجے میں پیرکوہ، حسن اور زمزمہ گیس فیلڈز سے کمپنی کو 235 ملین کیوبک فٹ گیس کی سپلائی معطل ہو گئی جس سے گیس کی مجموعی قلت 590 ملین کیوبک فٹ سے بڑھ کر 845 ملین کیوبک فٹ روزانہ ہو گئی ہے۔ پنجاب بھر کی انڈسٹری اور سی این جی سیکٹر کو گیس کی سپلائی معطل کر دی ہے تاہم اس میں پراسسنگ انڈسٹری شامل نہیں، ایم ڈی نے لاہور ریجن میں صبح کے وقت کھلنے والے سی این جی سٹیشنوں کی گیس فوری طور پر بند کرنے کا حکم دیا، حکومت سے گیس پائپ لائنوں کی سکیورٹی بڑھانے کی درخواست کی ہے۔ ان خیالات کا اظہار ایم ڈی سوئی ناردرن عارف حمید نے گزشتہ روز سوئی ناردرن ہیڈ کوارٹرز میں ہنگامی پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ دو روز قبل ہی ہم نے پیرکوہ کی تباہ شدہ پائپ لائن کی مرمت کی تھی جبکہ حسن گیس فیلڈ کی پائپ لائن کو تخریب کاروں نے دو روز قبل اڑایا تھا۔ عارف حمید نے کہا کہ 30 انچ کی پائپ لائن اڑانے کے نتیجے میں 25 فٹ چوڑا اور 30 فٹ گہرا گڑھا پڑ گیا ہے اور آگ کے شعلے ایک ہزار فٹ بلند ہیں، ٹمپریچر نیچے آتے ہی مرمت کا کام شروع کر دیا جائیگا۔ انہوں نے بتایا کہ اس پائپ لائن کیساتھ 24 انچ کی پائپ لائن کو بھی اگر خدانخواستہ اڑا دیا جاتا تو گھریلو صارفین کی گیس بند کرنا پڑ سکتی تھی۔