سانحہ راولپنڈی، پولیس کی غفلت، شرپسندوں کی معاونت کے شواہد ملنے پر حکام میں تشویش

لاہور (احسان شوکت سے) راولپنڈی سانحہ میں پولیس غفلت کے ساتھ ساتھ اہلکاروں کی جانب سے شر پسندوں کی معاونت کے شواہد ملنے سے حکام میں تشویش کی لہر دوڑ گئی جس پر حکومت اور پولیس حکام نے سکیورٹی اہلکاروں کی سکریننگ اور ان میںشدت پسندی کے رجحان پر قابو پانے کیلئے اقدامات کرنے کی ٹھان لی اور منصوبہ بندی کا آغاز کر دیا گیا۔ ذرائع کے مطابق قانون نافذ کرنے والے حساس اداروں کی راولپنڈی سانحہ کی ابتدائی تحقیقاتی رپورٹ میں پولیس کو غفلت و لاپرواہی کا ذمہ دار ٹھہرانے کے ساتھ ساتھ یہ خوفناک شواہد بھی سامنے آئے ہیں کہ سکیورٹی پر تعینات بعض اہلکاروں کی جانب سے شر پسندوں کو روکنے اور ان کے خلاف کارروائی کی بجائے ان کی معاونت کی گئی۔ ذرائع نے بتایا کہ جلوس کے موقع پر (فور لئیرسکیورٹی) یعنی چار مقامات پر تلاشی کے بعد داخلے کی اجازت تھی پھر شرپسندوں کے پاس اسلحہ کیسے اور کہاں سے آ گیا؟۔تشویشناک بات یہ ہے کہ شرپسندوں کی جانب سے سرکاری اسلحہ سے فائرنگ کرنے کے حوالے سے بھی ثبوت ملے ہیں ۔وہ اسلحہ بعض اہلکاروں نے اپنی مسلکی جذبات سے ملغوب ہو کر شرپسندوں کو تھما دیا،یا پھر شرپسندوں نے پولیس اہلکاروں سے چھین لیا تھا؟۔اس حوالے سے انکوائر ی کی جاری ہے۔ لیکن دونوں صورتوں میں پولیس کی مجرمانہ غفلت کو نظر انداز نہیں کیا جا سکتا ہے۔حکومت اور اعلی پولیس حکام کو اس صورتحال نے چکرا کر رکھ دیا ہے۔