بھارت سے پھلوں اور سبزیوں کی درآمدات، نرخوں میں 110 فیصد تک اضافہ

لاہور (رپورٹ : ندیم بسرا) حکومت پنجاب کے سرکاری اداروں میں باہمی رابطے نہ ہونے کے باعث مصنوعی مہنگائی کا طوفان آگیا۔ بھارت سے سبزیوں کی درآمدات نے سبزیوں اور پھلوں کے نرخوں میں 110 فیصد اضافہ کر دیا،لاہور شہر میں اشیائے خوردونوش کے دونرخ ،مارکیٹ کمیٹیوں کے اپنے نرخ ،ضلعی انتظامیہ کے اپنے نرخ جاری ہونے سے شہری مہنگائی کی چکی میں پسنے لگے۔ تفصیلات کے مطابق مارکیٹ کمیٹیوں پر محکمہ زراعت کے سیکرٹری،سپیشل سیکرٹری زراعت اور دیگر اعلیٰ افسران کا چیک اینڈ بیلنس نہیں، کسی بھی مارکیٹ کمیٹی میں سب انسپکٹر،انسپکٹرز وردیاںنہیں پہنتے۔ مارکیٹ کمیٹی اپنی مرضی سے نرخ جاری کرتی ہیں لاہور میں ضلعی انتظامیہ اپنے نرخ جاری کررہی ہے جس کی وجہ سے ایک ہی شہر میں الگ الگ نرخوں پر اشیائے خوردونوش فروخت ہورہی ہیں، ٹائون ایڈمنسٹریٹر زاور پرائس مجسٹریٹ کہیں بھی نظر نہیں آتے، عوام بے بسی کی تصویر بن کر رہ گئے۔ مارکیٹ کمیٹیوں میں چیئرمین، سیکرٹریز سیاسی بنیادوں پر تعینات کئے گئے ہیںجو آڑھتیوں،مڈل مین کے ساتھ گٹھ جوڑ کر لیتے ہیں۔مڈل مین کمیشن کی مد میں ۱یک سے ڈھائی فیصد تک رقم بھی وصول کر رہے ہیںجس کی وجہ سے اشیائے خودونوش مہنگی ہو جاتی ہیں۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ گزشتہ دو ماہ میں ٹماٹر،ادرک،پیاز،لہسن اور دیگر سبزیوں کی قیمتوں میں 15روپے سے لیکر 69 روپے فی کلو اضافہ ہوا ،جبکہ برائلر مرغی کے گوشت میں فی کلو 29 روپے کااضافہ ہو ا،بکرے کو گوشت میں 60 روپے اور بڑے گوشت کی قیمت میں 49 روپے کا اضافہ ہوا۔ صوبائی وزیر خوراک بلال یاسین نے کہا کہ پنجاب کے تمام اضلاع میں قائم پرائس کنٹرول کمیٹیوں کو مزید فعال کر دیا گیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ گزشتہ 16دنوں میں پنجا ب میں پرائس کنٹرول مجسٹریٹوں نے 6ہزار 8سو 98مارکیٹوں اور دکانوں کو چیک کیا اور اس دوران اوور چارجنگ،  ذخیرہ اندوزی اور کم وزن پر اشیاء فروخت کرنیوالے 1602افراد کے خلاف مقدمات کا اندراج کروایا اور 16لاکھ80ہزار روپے جرمانہ عائد کیا گیا - پرائس کنٹرول مجسٹریٹ روزانہ کی بنیاد پر اشیاء کی قیمتوں کو مانیٹر کر رہے ہیں جس سے سبزیوں اور پھلوں سمیت 19اشیاء ضروریہ کی قیمتیں مناسب سطح پر مستحکم ہوئی ہیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ پنجاب میں گزشتہ 10دنوں کے دوران 2ہزار 936پٹرول پمپس کو بھی چیک کیا گیا جہاں مقدار میں کمی کرنے اور اوور چارجنگ پر 38لاکھ روپے جرمانہ کیا گیا جبکہ36پٹرول پمپس کو سیل کر دیا گیا - صوبہ میں روٹی کی متعین وزن پر فروخت کو سو فیصد یقینی بنایا جارہا ہے۔