کشمیریوں کی امنگوں کے برعکس مسلط کردہ کوئی حل قبول نہیں: مذہبی، سیاسی رہنما

لاہور(نیوز رپورٹر، خصوصی نامہ نگار+ خبر نگار+ سپیشل رپورٹر) مذہبی، سیاسی و کشمیری رہنماﺅں نے صدر زرداری کے اس بیان کہ ”مسئلہ کشمیر پر بھارت سے مذاکرات چاہتے ہیں“ پر ردعمل ظاہر کرتے ہوئے کہا ہے کہ صدر پاکستان کوبھارت سے مذاکرات کے حوالہ سے کسی خوش فہمی میں نہیں رہنا چاہیے۔ وہ پاکستان سے مذاکرات میں کسی طور مخلص نہیں ۔کشمیریوں کی امنگوںکے برعکس مسلط کردہ کوئی حل قبول نہیں کیا جائے گا۔ان خیالات کا اظہارحافظ عبدالغفار روپڑی، میاں مقصود احمد، حافظ سیف اللہ منصور، حافظ خالد ولید نے نوائے وقت سے گفتگو کرتے ہوئے کیا۔ دریں اثناءپیپلز پارٹی کے رہنماﺅں میجر(ر) ذوالفقار گوندل، منیر احمد خان، مشیردیوان غلام محی الدین،عزیز الرحمان چن،اورنگزیب برکی نے کہا ہے کہ پیپلز پارٹی کا انتخابی نعرہ ہی کشمیر کی آزادی ہے ، پیپلز پارٹی کے علاوہ کوئی پارٹی مسئلہ کشمیر کے حل میں سنجیدہ نہیں - انتخابات میں کامیابی کے بعد کشمیر کی آزادی کیلئے جدو جہد کومزید تیز کریں گے۔ دریں اثناء تحریک انصاف پنجاب کے صدر اعجاز چودھری نے کہا ہے کہ کشمیر کا مسئلہ اقوام متحدہ کی قراردادوں کے مطابق حل ہونا چاہیے بین الاقوامی برادری کو اس بارے میں اپنا کردار ادا کرناچاہیے۔ تحریک انصاف کے رہنما اکرم عثمان نے کہا ہے کہ کشمیریوں پر بھارتی افواج کی طرف سے جس دہشت گردی کا سامنا ہے اس کو ختم کیا جانا چاہیے۔