”پروفیسر غلام اعظم کو سنائی گئی سزا انتقام اور تعصب پر مبنی ہے“

لاہور (خصوصی نامہ نگار) ممتاز سیاسی ، سماجی و صحافتی شخصیات نے پروفیسر غلا م اعظم سابق امیر جما عت اسلامی بنگلہ دیش کو سنا ئی گئی سز ا کی سخت مذمت کر تے ہو ئے اسے انصا ف اور قانو ن کے قتل کے مترادف قرار دیا ہے انجمن شہریا ن لا ہور کے سیکرٹری جنر ل میا ں مقصود احمد کی طرف سے جا ری کر دہ بیا ن میںجسٹس (ر)خلےل الرحمان ، سےنےٹر ایس ایم ظفر ، مجیب الرحمان شا می، اوریا مقبول جان ڈائےرےکٹر جنرل العلم ٹرسٹ، عبدالقادرحسن، عطا الرحمٰن ، الطا ف حسن قریشی ، احمد اوےس اےڈووکےٹ ، ذوالفقار چوہدری ایڈووکیٹ، بشری ٰ رحمٰن، ماہر تعلیم ڈاکٹر حسن صہےب مراد، ڈاکٹر مغےث الدےن شےخ، ڈاکٹر جمےلہ شوکت ، رانا نذر الرحمن صدر انجمن شہرےان لاہور ، ، ڈاکٹر احسن اختر ناز چئےر مےن ماس کمےونےکشن ڈےپارٹمنٹ پنجاب ےونےورسٹی، حامد خان ، بریگیڈیئر (ر) فاروق حمےد خان ویگرنے واضح کیا کہ یہ سزا بے گنا ہی کی سزا ہے جو سر اسر انتقام اور تعصب پر مبنی ہے ۔ جس ٹربےونل کی طرف سے ےہ سزا سنائی گئی ہے وہ ٹربےونل بےن الاقوامی طورپر تسلےم شدہ نہےں ہے۔ ٹربےونل کی تشکےل کے خلاف تمام دنےا کی انسانی حقوق کی تنظےموں اور مسلم ممالک کے حکمرانوں اور رہنماﺅں ،امرےکہ ،برطانےہ ،جرمنی کے ممتاز قانون دانوں نے نکتہ چےنی کی تھی اور فئےر ٹرائل کا مطالبہ کےا تھا۔