ڈرائیور بھرتی ہونیوالا وفاقی وزیر پانی و بجلی کا پرائیویٹ سیکرٹری بن گیا

لاہور (نیوز ڈیسک) نجکاری کمشن میں ڈرائیور بھرتی ہونیوالے آصف اعوان کو وفاقی وزیر پانی و بجلی خواجہ آصف کا پرائیویٹ سیکرٹری لگا دیا گیا ہے۔ آصف اعوان کے خلاف تھانہ اٹک سٹی میں چوری کا مقدمہ درج ہے جبکہ سابق وزیر سیدنوید کی سفارش پر جعلی ڈگری ہونے کے باوجود وہ ڈرائیور کی اسامی سے ترقی کرتا ہوا گریڈ 17 کا افسر بن گیا۔ میرٹ کا راگ الاپنے والی مسلم لیگ ن کی حکومت نے میرٹ کی دھجیاں بکھیرتے ہوئے جعلی ڈگری ہولڈر کو وفاقی وزیر کے پی ایس کے اہم عہدے پر تعینات کردیا اور اس طرح اسے قومی خزانے سے کروڑوں روپے ادا کر دیئے گئے ہیں اور قانون بھی خاموش ہے۔ آصف علی اعوان ولد ذاکر علی سات سال قبل ایک پرائیویٹ فرم ڈین کام میں ریجنل مینجرز کے طور پر کام کرتا تھا بعدازاں نجکاری کمشن میں ڈرائیور بھرتی ہوا پھر ٹیلی فون آپریٹررہا، اس وقت نوید قمر نجکاری کے وزیر تھے، ان کے دور میں وہ تیزی سے ترقی کرتا ہوا ایل ڈی سی اور پھر گریڈ14 میں تعینات ہوا۔ سید نوید قمر جب وزیر پٹرولیم تھے تو ان کی ہدایت پر ایک لیٹر کے ذریعے کہا گیا کہ آصف اعوان کو او جی ڈی سی ایل میں ڈیپوٹیشن پر لے لیا جائے۔ مارچ 2011ء تک اس وقت کے وفاقی وزیر پٹرولیم کے ساتھ پرائیویٹ سیکرٹری کے طور پر کام کیا۔ او جی ڈی سی ایل میں ایک روز بھی کام نہیں کیا اور تنخواہ اور ٹی اے ڈی اے باقاعدگی سے لیتا رہا۔ جانچ پڑتال پر آصف اعوان کا آئی ٹی کمپیوٹر ٹیکنالوجی کا سرٹیفکیٹ بھی جعلی نکلا۔