تعلیمی اداروں کے عملے‘ ویگن ڈرائیوروں اور دیگر کی کلیئرنس لینے کی ہدایت

لاہور (معین اظہر سے) دہشت گردوں کی طرف سے تعلیمی اداروں کو نشانہ بنانے کی خفیہ اداروں کی اطلاعات کے بعد سکولوں کے سٹاف، ویگن ڈرائیوروں، تعلیمی اداروں میں اشیاء فراہم کرنے والے افراد کی فہرستیں، سکولوں کے اردگرد تمام سٹاف،  بچوں کو لینے آنے والی گاڑیوں کے نمبر اور ڈرائیوروں کی خفیہ اداروں سے کلیئرنس کرانے کی ہدایات جاری کی گئی ہیں سکولوں، کالجوں، یورنیورسٹی کے اردگرد موبائل سے فوٹو گرافی کرنے پر پابندی عائد کر دی گئی ہے۔  سکولوں کو اپنے تمام فنکشن ملتوی کرنے رات کے وقت سکولوں میں چیکنگ کا سسٹم بنانے کی ہدایات جاری کی گئی ہیں۔ بعض حساس اداروں کی طرف تعلیمی اداروں کو دہشت گردی کا نشانہ بنانے کی رپورٹ  دی گئی ہیں  جس  کے بعد  نئی ہدایات بھی جاری کی گئی ہیں۔ تمام سرکاری  اور نجی  سکولوں، کالجوں، یورنیورسٹیوں  خصوصا جہاں  مخلوط نظام تعلیم ہے اس کے لئے ہوم ڈیپارٹمنٹ نے ہائر ایجوکیشن ، سکولز ایجوکیشن ، محکمہ صحت اور دیگر اداروں کو خط  جاری کیا ہے جس میں کہا گیا ہے کہ تعلیمی اداروں کے تمام ویگن ڈرائیور، وین ڈرائیور اور پرائیوٹ ویگن  یا گاڑی ڈرائیور جو بچوں کو لینے آتے ہیں ان کی فہرستیں ایک ہفتہ کے اندر بھیجی جائیں جہاں سے سپیشل برانچ اور آئی ایس آئی کے ہر ضلع کے سیکٹر انچارج سے سیکورٹی کلیرنس لی جائے۔ تعلیمی اداروں کے سٹاف کی سکیورٹی کلیرنس بھی لینے کی ہدایات جاری کی گئی ہیں ان کا ڈیٹا اور تصاویر کلیرنس کے لئے بھیجی جائیں گی۔ جو لوگ کینٹین چلاتے ہیں یا  کمپیوٹر یا کسی سروس کی فراہمی کے لئے تعلیمی ادارے میں آتے ہیں ان کی سکیورٹی کلیرنس لی جائے۔ کسی ادارے میں کوئی سروس فراہم کرنے کے لئے آنے والے نئے فرد کے داخلے پر پابندی عائد کی جائے۔ تعلیمی ادارے میں سروسز کے لئے آنے والے فرد کا رجسٹر رکھا جائے جس میں اس کے ہر وزٹ کی تاریخ ، ٹائم ، اور اس کا مقصد لکھا جائے۔ تعلیمی ادارے کی بسوں میں کسی ایمرجنسی کی صورت میں ایمرجنسی پلان چسپاں کیا جائے۔ تعلیمی اداروں میں رکھے جانے والے سکیورٹی گارڈ صرف منظور شدہ پرائیوٹ کمپنیوں سے رکھے جائیں گے ان کی سکیورٹی کلیرنس بھی لی جائے گی ۔تمام سکولوں کے سٹاف کو سکولوں کے اردگرد مشکوک گاڑی ، فرد ، یا مشکوک وزیٹر کی فوری اطلاع کرنے  دھیاں رکھنے کی اطلاع دینے کی ٹریننگ دی جائے۔ بچوں کو کسی ایمرجنسی کی صورت کیا کرنا چاہیے کے بارے میں بتایا جائے۔ تمام تعلیمی اداروں میں لازمی قر ار دے دیا گیا ہے کہ وہاں ایمرجنسی اور میڈیکل کٹ رکھی جائیں۔