ٹیکس لگا کر تنخواہوں میں اضافے کی بجائے کمی کردی گئی: طاہرالقادری

لاہور (خصوصی نامہ نگار) پاکستان عوامی تحریک کے قائد طاہر القادری نے کہا ہے چاہےے تو یہ تھا کہ گریڈ 1 سے 16تک کے سرکاری ملازمین کی تنخواہوں میں 50فی صد اضافہ کر کے انہیں ریلیف دیا جاتا مگر حکومت نے تنخواہ میں اضافہ نہ کر کے اور تنخواہوں پر ٹیکس بڑھا کر غریب اور متوسط طبقے کو مہنگائی کے رحم و کرم پر چھوڑ دیا ہے۔ تنخواہوں میں اضافہ نہ کر نا عوام کے ساتھ بڑا ظلم ہے ۔انہوں نے کہا غریب اور متوسط طبقے پر بوجھ بڑھا کر اشرافیہ کےلئے لگثرری گاڑیوں پر ٹیکس کم کر دیا گیا ہے ۔تعلیم اور صحت کے شعبوں میں بجٹ کو نظر انداز کرنا بھی عوام کی مشکلات میں اضافہ کرنا ہے۔ حج اخراجات میں اضافہ کر کے مذہبی فریضہ کی ادائیگی کو مشکل بنا دیا گیا۔ ٹیکس نیٹ کو بڑھانے کی بجائے اس کی شرح بڑھا دی گئی ہے۔ جی ایس ٹی میں اضافہ عام آدمی کےلئے مزید مشکلات پیدا کرے گا۔بےروزگاری کے خاتمے کےلئے کوئی مربوط پلان نہیں دیا گیا ۔بجٹ خسارے پر قابو پانے کےلئے کوئی اقدام تجویز نہیں کیا گیا۔ ٹیکس ،بجلی اور گیس چوری روکنے کےلئے کوئی پلان بجٹ میں شامل نہیں ۔قرضوں پر انحصار ختم کر نے کےلئے بھی کوئی اقدام تجویز نہیں کیا گیا۔