میانمار میں مسلمانوں کے قتل عام کیخلاف دینی جماعتوں کا یوم احتجاج‘ ملک بھر میں مظاہرے

لاہور (خصوصی نامہ نگار + نامہ نگاران) جماعة الدعوة، جماعت اسلامی، جے یو آئی، سنی تحریک سمیت مختلف مذہبی جماعتوں کی اپیل پر میانمار میں مسلمانوں کے قتل عام کے خلاف جمعہ کو ملک بھر میں یوم احتجاج منایا گیا، لاہور سمیت مختلف شہروں میں احتجاجی مظاہرے کئے گئے۔ مظاہرین نے میانمار کی بدھسٹ حکومت کے خلاف شدید نعرے بازی کی اور اقوام متحدہ، سلامتی کونسل و دیگر حقوق انسانی کے علمبردار عالمی اداروں کی بے حسی پر سخت تنقید کا نشانہ بنایا۔ صوبائی دارالحکومت لاہور میں جماعة الدعوة نے چوبرجی چوک میں مظاہرہ کیا جس میں طلبا، وکلا، تاجروں اور صنعتکاروں سمیت تمام مکاتب فکر اور شعبہ ہائے زندگی سے تعلق رکھنے والے سینکڑوں افراد نے شرکت کی۔ جماعة الدعوة کے امیر حافظ محمد سعید نے خطاب میں کہا کہ نوازشریف مظلوم برمی مسلمانوں کے قتل عام کے خلاف پاکستان میں او آئی سی کا اجلاس بلائیں اور اسی طرح سلامتی کونسل کا اجلاس بلا کر برما کے مسئلہ کو عالم اسلام کامسئلہ بنا کر اٹھایا جائے۔ انہوں نے کہا کہ انڈیا کے ساتھ دوستی کا ہاتھ بڑھایا جاتا رہا، بجلی اور گیس کے معاہدے ہوتے رہے اور اصل مسائل کو چھوڑ دیا گیا تو کامیابی نہیں ملے گی۔ آج برما میں سینکڑوں مسلمان خواتین کی عصمت دری اور ہزاروں مسلمانوں کو شہید کیا جا چکا ہے لیکن مسلم حکمرانوں کے کانوں پر جوں تک نہیں رینگ رہی۔ نومنتخب حکمران مظلوم برمی مسلمانوں کی مدد کا فریضہ سرانجام دیں۔ دریں اثناءجماعة الدعوة کی طرف سے پریس کلب اسلام آبادکے باہر بھی زبردست احتجاجی مظاہرہ کیا گیا جس میں بدھسٹ حکومت کے خلاف شدید نعرے بازی کی گئی۔ ملتان میں جماعة الدعوة کے زیر اہتمام کچہری چوک میں بڑا احتجاجی مظاہرہ کیا گیا جس میں شہریوں کی بڑی تعداد شریک ہوئی۔ ادھر لاہور میں ورلڈ پاسبان ختم نبوت نے میانمار کے مسلمانوں کی نسل کشی کے خلاف بعد از نماز جمعہ ورکشاپ چوک گلبرگ تک ریلی نکالی، رہنما¶ں علامہ ممتاز اعوان، مفتی عاشق حسین، مفتی سیف اللہ قاسمی اور دیگر نے عالم اسلام کے مسلمانوں کی نسل کشی پر مجرمان خاموش ختم کرے۔ علاوہ ازیں مال روڈ پر انجمن تاجران نقی مارکیٹ کے عہدےداروں اختر سعید قریشی، وحید احمد، فاروق آزاد اور خالد اقبال قریشی کی زیر قیادت مظاہرہ کیا گیا جس میں برما کے مسلمانوں پر ظلم کے خلاف شدید نعرے بازی کی گئی۔ اسی طرح منہاج القرآن علما کونسل کے زیر اہتمام جامع مسجد ماڈل ٹا¶ ن کے باہر مظاہرہ کیا گیا۔ رہنما¶ں فرحت حسین شاہ، میر آصف اکبر، علامہ آزاد حسین اور دیگر نے کہا کہ انسانی حقوق کی عالمی تنظیمیں برمی مسلمانوں کی نسل کشی رکوانے کے لئے کردار ادا کریں، جماعت اسلامی کے امیر سید منور حسن نے جامع مسجد منصورہ میں نماز جمعہ کے اجتماع سے خطاب کرتے ہوئے کہا مسلم حکمران برما کے مسلمانوں پر مظالم کے باوجود لمبی تان کر سوئے ہیں حالانکہ اسلامی تعلیمات کے مطابق مظلوم مسلمان کی مدد کرنا ان کا فرض منصبی ہے۔ انہوں نے مطالبہ کیا کہ حکومت پاکستان برمی مسلمانوں کے حق میں آواز بلند کرے۔ ادھر سنی تحریک نے لاہور پریس کلب کے باہر مولانا مجاہد الرسول کی قیادت میں احتجاج کرتے ہوئے کہا کہ مسلم حکمرانوں کو روہنگیا بھائیوں کو بچانے کے لئے متفقہ لائحہ عمل اپنانا ہو گا۔ علاوہ ازیں جے یو آئی کے کارکنوں نے لاہور ہوٹل چوک پر احتجاجی مظاہرہ کیا۔ مساجد میں مولانا قمرالدین، مولانا محمد عبداللہ، مولانا محمد یوسف، مولانا محمد امجد خان اور دیگر نے خطبات جمعہ کے دوران روہنگیا مسلمانوں کے قتل عام کی شدید مذمت کی۔ فیروزوالا سے نامہ نگار کے مطابق جماعت اہلسنت شاہدرہ کے زیر اہتمام صاحبزادہ نصیر احمد قادری کی زیر قیادت مظاہرہ کیا گیا۔ کوئٹہ میں بیورو رپورٹ کے مطابق احتجاجی مظاہرے سے خطاب کرتے ہوئے جے یو آئی رہنما مولانا عبدالغفور حیدری، پریس کلب کے سامنے مظاہرے سے خطاب کرتے ہوئے جماعة الدعوة کے رہنما حافظ محمد صادق اور ڈاکٹر احسان نے کہا کہ برما کے مسلمانوں پر مظالم کے پہاڑ توڑ دئیے گئے مگر افسوس پوری دنیا تماشائی بنی ہوئی ہے، اس بے حسی سے بدھ انتہا پسندوں کو قتل عام کی شہہ ملی ہے۔ فیصل آباد سے نمائندہ خصوصی کے مطابق میانمار میں بے گناہ مسلمانوں کے قتل عام پر ملک بھر کی طرح فیصل آباد میں بھی دینی جماعتوں کے کارکنوں نے جامع مسجد المرکز الاسلامی چنیوٹ بازار کے باہر ہونے والے مظاہرہ کیا، قیادت ضلعی امیر انجینئر عظیم رندھاوا نے کی۔ مظاہرین سے خطاب کرتے ہوئے جماعت اسلامی کے رہنماﺅں نے کہا کہ برما کے لاکھوں مسلمانوں کو صرف کلمہ گو ہونے کی سزا دی جا رہی ہے جبکہ عالمی برادری نے مجرمانہ خاموشی اختیار کر رکھی ہے۔ دریں اثناءحافظ آباد سے نمائندہ نوائے وقت کے مطابق تحریک سنی تحریک نے میانمار میں مسلمانوں کے قتل عام کے خلاف شیر ربانی چوک میں احتجاجی مظاہرہ کیا اور نعرہ بازی کی۔ مظاہرین سے خطاب کرتے ہوئے محمد عثمان حیدر نقوی نے کہا کہ برما میں مسلمانوں کا قتل عام مسلم ممالک کے حکمران چوڑیان پہن لیں۔ او آئی سی اسلامی ممالک پر ڈھائے جانیوالے مظالم کا بدلہ چکائے، امن کے نام پر ناجائز قابضین کو بھگائے اور تمام مسلم ممالک کے تحفظ اور سلامتی کے لئے خصوصی لائحہ عمل مرتب کریں۔ علاوہ ازیں میانمار کے مسلمانوں پر بدھ اکثریت کے مظالم کے خلاف زبردست احتجاج کرتے ہوئے حافظ آباد کی مساجد میں مذمتی قراردادیں منظور کی گئیں۔ مقررین نے اس امر پر سخت سکھ کا اظہار کیا کہ روہنگیا مسلمانوں کو لاکھوں کی تعداد میں شہید اور ملک بدر کیا جا رہا ہے، ان کی جائدادیں اور مساجد کو نزر آتش کیا جا رہا ہے لیکن عالمی برادری مجرمانہ خاموشی اختیار کئے ہوئے ہے۔ قراردادوں میں حکومت پاکستان اور اقوام متحدہ پر زور دیا گیا کہ حکومت میانمار کو مسلمانوں پرانسانیت سوز مظالم سے روکا جائے۔
دینی جماعتیں / مظاہرے