پیر پگاڑا نے مشرف کیخلاف کارروائی کی مخالفت کر دی

لاہور (اشرف ممتاز/ نیشن رپورٹ) پاکستان مسلم لیگ فنکشنل کے صدر پیر پگاڑا نے کہا ہے کہ وہ سابق صدر مشرف کے خلاف بغاوت کے الزام کے تحت کارروائی کی مخالفت کریں گے۔ نیشن سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ پنجاب اسمبلی میں سابق صدر کے حوالے سے پاس ہونے والی متعلقہ قرارداد کی حمایت کے لئے انہوں نے اپنی پارٹی ارکان کو ہدایت نہیں کی تھی۔ انہوں نے کہا کہ جنرل مشرف کے نظام کا حصہ بننے والے افراد مطلب پرست تھے اور اب وہی لوگ مشرف کے خلاف کارروائی کا مطالبہ کر رہے ہیں۔ انہوں نے ایک سوال کے جواب پر واضح کیا کہ میں تمام لیگوں کو اکھٹا کر کے ایک جماعت بنانے کی کوشش کر رہا ہوں۔ انہوں نے اس تاثر کی نفی کی کہ وہ ایک الائنس بنا رہے ہیں انہوں نے کہا کہ چودھری شجاعت میرے ساتھ مسلم لیگ ق اور فنکشنل لیگ کو اکھٹا کرنے پر اتفاق کیا تھا۔ اب اگر وہ کچھ اور کہہ رہے ہیں تو یہ اس اتفاق سے روگردانی ہو گی۔ انہوں نے کہا کہ وہ مسلم لیگ ن کو بھی اپنی جماعت میں ضم کر کے بڑی جماعت بنانا چاہتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ اگر کسی مسلم لیگ نے لیگوں کے اتحاد میں شامل ہونے کی مخالفت کی تو عدالت سے اپیل کریں گے کہ اس جماعت کو مسلم لیگ کا نام استعمال کرنے کی اجازت نہ دی جائے۔ انہوں نے بتایا کہ اب تک ان کے اور مسلم لیگ ن کے درمیان کوئی رابطہ نہیں ہوا۔ وہ قائد مسلم لیگ ن سے مناسب وقت پر رابطہ کریں گے۔ انہوں نے کہا کہ مڈ ٹرم انتخابات کا کوئی امکان نہیں۔
پیر پگاڑا