لگتا ہے پولیس دوبارہ وکلاء کے ساتھ تنازعہ کھڑا کرنا چاہتی ہے: ہائیکورٹ

لگتا ہے پولیس دوبارہ وکلاء کے ساتھ تنازعہ کھڑا کرنا چاہتی ہے: ہائیکورٹ

لاہور (وقائع نگار خصوصی) لاہور ہائیکورٹ نے وکلاء کے خلاف درج مقدمہ خارج نہ کرنے کا سخت نوٹس لیتے ہوئے قرار دیا ہے کہ لگتا ہے پولیس دوبارہ وکلاء کے ساتھ تنازعہ کھڑا کرنا چاہتی ہے۔ جسٹس شاہد وحید ڈار نے ایس ایس پی انویسٹی گیشن عبدالرب پر سخت برہمی کا اظہار کرتے ہوئے وکلاء کے خلاف مقدمہ خارج کرنے کیلئے ایک ہفتے کی مہلت دے دی۔ فاضل عدالت نے ممبر پنجاب بار کونسل بابر وحید کی درخواست پر سماعت کی۔ صدر لاہو ہائیکورٹ بار شفقت محمود چوہان، ممبر پاکستان بار کونسل اور دیگر سینئر وکلاء عدالت میں پیش ہوئے، انہوں نے عدالت کو بتایا کہ حالیہ دنوں میں وکلاء اور پولیس کے درمیان ہونے والے جھگڑے اور بعد کی صورتحال پر دو رکنی کمیٹی بنائی گئی تھی جس میں طے پایا تھا کہ وکلاء اور پولیس ایک دوسرے کیخلاف مقدمے اور درخواستیں واپس لے لیں گے۔ انہوں نے بنچ کو بتایا کہ وکلاء نے پولیس کے خلاف تمام درخواستیں واپس لے لی ہیں، عدالتی نوٹس پر ایس ایس پی انویسٹی گیشن عبدالرب عدالت میں پیش ہوئے، انہوں نے عدالت کو بتایا کہ اسلام پورہ تھانہ میں وکلاء کے خلاف درج مقدمہ ابھی تک واپس نہیں لیا گیا، تفتیش کا عمل مکمل ہونے کے بعد مقدمہ واپس لے لیا جائیگا۔ عدالت نے سماعت 20مارچ تک ملتوی کر دی۔