مشکوک افراد کیخلا ف سرچ آپریشن، 23 سو افراد کو حراست میں لیا، کوئی اہم گرفتاری عمل میں نہیں آئی

لاہور (نامہ نگار) لاہور میں پولیس نے گزشتہ 5 دنوں میں مشکوک افراد کے خلاف سرچ آپریشن کے دوران23 سو افراد کو حراست میں لیا مگر تاحال کوئی اہم گرفتاری عمل میں نہیں آئی ہے۔اس کے برعکس پولیس کی جانب سے بلاجواز گھروں پر دھاوا بولنے اور ہراساں وپریشان کرنے پر شہریوں کی جانب سے احتجاج کا سلسلہ جاری ہے۔ صوبائی دارالحکومت پو لیس کا گزشتہ 5 روز سے سرچ آپریشن کا سلسلہ جاری ہے جس دوران پولیس نے شہرکے مختلف علاقوں میں سرچ آپریشن کے دوران 23 سوافراد کو حراست میں لیا ہے۔سرچ آپریشن کی کارکر دگی چیک کی جائے تو تاحال کوئی اہم گرفتاری عمل میں نہیںآئی ہے اور نہ ہی پولیس کسی دہشت گردوں کو گرفتار میں کامیاب ہو سکی ہے ۔پولیس کے گھروں پر چھاپوں نے شہر یوں کو خوف و پریشانی میں مبتلا کر دیا جس پر شہری سراپا احتجاج ہیں۔شہریوں کا کہنا ہے پولیس چادر چار دیواری کا تقدس پامال کر رہی ہے،  شریف شہریوں کو بلاجواز حراست میں لے کر تھانے لے جاتے ہیں ۔پولیس کی جانب سے شہریوں سے دیہاڑیاں لگانے کی شکایات بھی موصول ہو رہی ہیں۔خواتین کے ساتھ بھی بدتمیزی کے واقعات سامنے آرہے ہیں، شہریوں کو تھانوں میں کرایہ داروں کے کوائف درج کرانے کے لئے بھی شدید مشکلات کا سامناکرنا پڑ رہا ہے۔ سخت گرمی میں تھانوں میں شہریوں کو خوار کیا جا رہا ہے گھنٹوں انتظار کرایا جاتا ہے۔اس صورتحال پر پر شہریوں کی جانب سے احتجاج کا سلسلہ بھی جاری ہے مگر عام عوام کی کہیں شنوائی نہیں ہو رہی ۔