خسرہ سے ایک اور بچی ہلاک، ہائیکورٹ کی کمیٹی کو تحقیقات جلد مکمل کرنے کی ہدایت

لاہور (سپیشل رپورٹر + وقائع نگار خصوصی + نوائے وقت نیوز) جناح ہسپتال میں خسرہ سے متاثرہ بچی انتقال کر گئی جبکہ لاہور ہائیکورٹ کے جسٹس خالد محمود خان نے خسرہ سے ہونے والی ہلاکتوں کے ذمہ داروں کا تعین کرنے کےلئے بنائی گئی کمیٹی کو انکوائری جلد مکمل کرنے کی ہدایت کرتے ہوئے مزید سماعت 10 جولائی تک ملتوی کر دی ہے۔ فاضل عدالت نے گذشتہ روز کیس کی سماعت کا آغاز کیا تو درخواست گذار کے وکیل محمد اظہر صدیق نے دلائل دیتے ہوئے کہا کہ عدالتی حکم کے باوجود خسرہ وبا کی روک تھام کے حوالے سے م¶ثر اقدامات نہیں کئے جا رہے۔ عوام مایوسی کا شکار ہیں۔ سرکاری وکیل نے عدالت کو بتایا کہ عدالتی حکم پر حقائق جاننے کے حوالے سے قائم انکوائری کمیٹی تحقیقات کرنے میں مصروف ہے کمیٹی کو جواب داخل کرنے کے لئے مزےد مہلت دی جائے۔ جس پر عدالت نے خسرہ سے ہونے والی ہلاکتوں کے ذمہ داروں کا تعین کرنے کے لئے دائر درخواست کی سماعت 10 جولائی تک ملتوی کرتے ہوئے انکوائری کمیٹی کو جلد انکوائری مکمل کرنے کی ہدایت کر دی۔ علاوہ ازیں لاہور میں خسرہ کے مزید 21 مریض جبکہ پنجاب میں 24 گھنٹوں کے دوران 146 نئے مریض سامنے آئے ہیں۔ اب تک لاہور میں 5674 اور پنجاب کے اندر خسرہ سے متاثرہ مریضوں کی تعداد 21272 ہو چکی ہے۔ محکمہ پنجاب کے ترجمان کا کہنا ہے کہ اب تک لاہور میں 83 اور پنجاب میں 183 بچوں کی موت خسرہ سے واقع ہو چکی ہے۔